News Detail Banner

حج کے موقع پر پوری دنیا سے مسلمانوں کی آمد ایک فقیدالمثال اجتماع ہے، جس میں رنگ و نسل، علاقہ و زبان سے بالاتر ہوکر توحید اور رسول اللہ کی محبت تمام حجاج کا اصل سرمایہ ہوتا ہے۔ لیاقت بلوچ

10مہا پہلے

لاہور05 جولائی 2023ئ

نائب امیر جماعت اسلامی، سیکرٹری جنرل ملی یکجہتی کونسل لیاقت بلوچ نے فریضہ حج کی ادائیگی کے بعد پاکستان واپسی پر میڈیا نمائندگان سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حج کے موقع پر پوری دنیا سے مسلمانوں کی آمد ایک فقیدالمثال اجتماع ہے، جس میں رنگ و نسل، علاقہ و زبان سے بالاتر ہوکر توحید اور رسول اللہ کی محبت تمام حجاج کا اصل سرمایہ ہوتا ہے۔ حج کا عظیم الشان اجتماع عالمِ اسلام کی قیادت کی دانش اور وحدتِ امت کے جذبہ سے ایک بڑے انقلاب اور امتِ مسلمہ کی بیداری، اغیار استعمار کی غلامی سے نجات کا ذریعہ بن سکتا ہے۔ حج کے موقع پر سعودی عرب حکومت خصوصاً شاہ سلمان اور ولی عہد محمد بن سلمان کی قیادت میں بہت شاندار انتظامات کیے گئے۔ سعودی منتظمین کا نرمی، ہمدردی، خیرخواہی اور ڈسپلن کے لیے سختی کا حسین امتزاج تھا۔ دنیا بھر کے مسلمانوں کے لیے حج انتظامات یادگار اور خوشگوار تجربہ تھا۔ پاکستانی حجاج اور د ±نیا بھر سے آئے اوورسیز پاکستانی حجاج ملک کے بارے میں فکر مند اور تشویش میں تھے اور پاکستان کے استحکام، خوش حالی اور سلامتی کے لیے ہر قدم پر دعا گو تھے۔

لیاقت بلوچ نے کہا کہ سویڈن میں عید کے موقع پر قرآنِ کریم کی بے حرمتی کے سنگین واقعہ اور فرانس میں نسل پرستی، تعصب کی بنا پر مسلم نوجوان کے وحشیانہ قتل پر بڑی تشویش اور جذبہ احتجاج تھا۔ اسلامی مقدسات کی حفاظت کے لیے عالم اسلام کی قیادت کو صرف احتجاج نہیں یورپ میں مذاہب کے درمیان تصادم کی فضا پیدا کرنے اور اہلِ ایمان کی دل آزادی پر مبنی واقعات کے سدِباب کے لیے عملی اقدامات کرنا ہوں گے۔ یورپ کے اندر پروان چڑھتا یہ بے لگام آزادی اظہار دراصل مسلمانوں سے نفرت، تعصب اور اسلام دشمنی پر مبنی ایک قبیح فعل ہے۔ اسلامی حقوق کی عالمی تنظیمیں اِس سنگین دہشت گردی پر خاموشی توڑیں اور ان متعصبانہ و انسان دشمن رویوں کے خلاف آواز بلند کریں۔

لیاقت بلوچ نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر سے آئے حجاج کرام سے ملاقات کے دوران آزادی کشمیر کے لیے ان کے جذبات اور تڑپ کا جذبہ عروج پر تھا۔ کشمیری کسی قیمت پر بھی بھارتی غلامی قبول کرنے کے لیے تیار نہیں۔ کشمیری حجاج کو پاکستانی حکومتوں کی معنی خیز خاموشی پر تشویش تھی اور وہ اس حوالے سے برادرانہ گِلہ کا اظہار بھی کررہے تھے۔