Jamaat-e-Islami Pakistan |

تقویٰ کا زاد سفر (لیاقت بلوچ،نائب امیر جماعت اسلامی)

  1. روزہ اہل ایمان میں تقویٰ کی صفت پیدا کرنے کا بہترین ذریعہ ہے اسی لیے روزے اہل ایمان پر فرض کیے گئے ہیں۔ روزہ بے مثل عبادت ہے۔ سیدنا ابوامامؓ بیان کرتے ہیں کہ میں رسول اللہ ﷺکی خدمت میں حاضر ہوا میں نے عرض کیا اے اللہ کے رسول ﷺ مجھے ایسے کام کا حکم دیں جس کے ذریعے اللہ تعالیٰ مجھے فائدہ پہنچائے ۔ آپ ﷺ نے فرمایا ”روزہ رکھ اس جیسا کوئی عمل نہیں۔ “انسان کی جو تربیت نماز کے ذریعے سے ہوتی ہے اس میں مزید نکھار اور روحانی وجسمانی تربیت روزوں کے ذریعے ہوتی ہے ۔ روزہ تقویٰ اور اللہ کی رضا حاصل کرنے کا بہترین ذریعہ ہے روزہ انسان کے تزکیہ ¿ نفس میں اہم کردار ادا کرتاہے ۔ روزہ بندہ میں حضوری کی کیفیت پیدا کرتاہے اور اس جذبے کو پختہ کرتاہے کہ اللہ ہر لمحہ ہمیں دیکھ رہاہے۔
    تقویٰ کے ذریعے بندہ مومن ایمان کی تکمیل اور ترقی وسربلندی کی منازل تیزی سے طے کرتاہے ۔ اللہ تعالیٰ کی اطاعت شعاری اور بندگی کا جذبہ مزیدگہرا ہوتاہے ۔ روزہ کی مشقت تقویٰ کے حصول کا ذریعہ ہے اس بنیاد پر ایمان کے تقاضے پورے کرنے اور روحانی فوائد و فیوض و برکات حاصل کرنے کا ذریعہ بنتا ہے۔ انسان تقویٰ اختیار کرتے ہوئے اپنے اللہ کے احکامات کو بجا لائے، اُس کی اطاعت کرے، گناہوں سے بچے ، جو شخص گناہ نہیں چھوڑتا اور اپنے دامن کو سیئات سے نہیں بچاتا وہ متقی اور پرہیز گار نہیں ہے ۔ شیخ عبدالقادر جیلانی ؒ نے تقویٰ کے الفاظ میں حقیقت تقویٰ یہ ہے کہ جن باتوں کا اللہ عزوجل نے حکم دیا ہے ان پر عمل کیا جائے اور جن سے روکا ہے اُن کو ترک کردیا جائے اور اُس کے افعال ومقصودات اور تمام آرام و مصائب و مشکلات پر صبر کیا جائے ، غرض یہ کہ مسلمان وہ ہے جو اللہ کو مانے اور مومن و متقی وہ ہے جو صرف اور صرف اللہ اور اُس کے رسول اللہ کی مانے ،باقی سب کاانکار کردے ۔
    تقویٰ دین اسلام کی اساس ہے ۔اس کے بغیر احکامات الٰہیہ کما حقہ ادا نہیں کیے جاسکتے اور نہ ہی اس کے بغیر انسان اللہ سے اپنا تعلق مضبوط کرسکتاہے۔ تقویٰ اللہ کے ہاں بڑا محبوب ہے چنانچہ اللہ نے تقویٰ کی راہ اختیار کرنے کا حکم دیاہے ۔ قرآن کریم کی سورة الحشر آیت نمبر18میں ارشاد ہوا ہے ”اے ایمان والواللہ سے ڈرواور ہر آدمی دیکھ لے کہ اُس نے کل (یعنی روز قیامت ) کے لیے کیا تیاری کی ہے اور اللہ سے ڈرتے رہو ، بے شک اللہ تمہارے اعمال سے پوری طرح باخبر ہے ۔ اس آیت کریمہ میں قرار دیا گیاہے کہ تقویٰ کے ذریعے تعلق بااللہ کی بنیاد مضبوط ہوتی ہے۔ اہل ایمان کو یہ ہدایت کی گئی ہے کہ ظاہر و باطن میںیعنی ہر حال میں اللہ سے ڈرتے رہیں فرائض اور واجبات کی ادائیگی کا اہتمام کریں اور کبائر و ممنوعات سے ہیں اور ہر وقت اپنی آخرت کی سدھار کی کوشش میں لگے رہیں اور زندگی کا یہ اسلوب بن جائے کہ اللہ تعالیٰ میرے اعمال دیکھ رہاہے اور میرے اعمال ریکارڈ ہو رہے ہیں کوئی چیز بھی اللہ سے مخفی نہیں ہے۔ اللہ تعالیٰ نے (سورة آل عمران 102)میں فرمایا ہے کہ ”اے ایمان والو اللہ سے ڈرو جیساکہ اُس سے ڈرنے کاحق اور تمہاری موت آئے تو اسلام پر آئے۔ “ سیدنا عبداللہ بن مسعود ؓ نے تقویٰ کے معنی و مفہوم ایسے بیان کئے ہیں کہ اللہ کی اطاعت کی جائے ، اُس کی نا فرمانی نہ کی جائے ، اُسے یاد کیا جائے ، بھولا نہ جائے ،اُس کا شکر ادا کیا جائے، ناشکری نہ کی جائے۔
    تقویٰ اللہ سے دوستی کا بہترین ذریعہ ہے ۔ جو لوگ اللہ پر کامل ایمان رکھتے ہیں ،اور ہر لمحہ اللہ تقویٰ کی راہ اختیار کرتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ اُن سے محبت کرتاہے اور اُن سے دوستی کرتاہے (سورة یوسف آیت ۲۶۔۳۶)میں ارشاد باری تعالیٰ ہے ”آگاہ رہو ،بے شک اللہ کے دوستوں کو نہ کوئی خوف لاحق ہوگا نہ کوئی غم ۔ جو لوگ ایمان لائے اور اللہ سے ڈرتے رہے اُن کے لیے دنیا کی زندگی میں خوشخبری ہے اور آخرت میں بھی ، اللہ کے وعدوں میں تبدیلی نہیں آتی یہ ہی سب سے عظیم کامیابی ہے۔ تقویٰ عظیم کامیابی کا ذریعہ ہے جس میں اللہ تعالیٰ نے دنیا وآخرت دونوں جگہ اپنی رحمت ، رضا مندی اور جنت کی بشارت دی ۔ سیدنا ابوالدرداؓءسے روایت ہے کہ رسول اللہ نے فرمایا :”دنیاوی زندگی میں بشارت سے مراد نیک خواب ہے جو مسلمان دیکھتاہے۔ “ اہل ایمان کے لیے قرآن کریم ہر مرحلہ پر رہنمائی ہے ، حوصلہ ، عزم اور کامیابی کی نوید ہے ۔ (سورة حٰم سجدہ ،آیت۰۳میں اللہ کا ارشاد ہے :”بے شک جن لوگوں نے کہاکہ ہمارا رب اللہ ہے پھر اس (عقیدہ توحید اور عمل صالح) پر جمے رہے اُن پر فرشتے اُترتے ہیں اور کہتے ہیں کہ نہ ڈرو،نہ غم کرو اور اُس کی جنت کی خوشخبری سن لو جس کا تم سے وعدہ کیا جاتاتھا۔ “
    تقویٰ دعوت دین اور امر بالمعروف ونہی عن المنکر کی فرضیت کی ادائیگی کے لیے ناگزیر ہے ۔ قرآن میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے (سورة آل عمران ،آیت 105-104) ”تم میں کچھ لوگ تو ایسے ضرور ہی رہنے چاہئیں جو نیکی کی طرف بلائیں، بھلائی کا حکم دیں اور برائیوں سے روکتے رہیں جو لوگ یہ کام کریں گے وہی فلاح پانے والے ہیں کہیں تم اُن لوگوں کی طرح نہ ہوجانا جو فرقوں میں بٹ گئے اور کھلی کھلی واضح ہدایت پانے کے بعد پھر اختلافات میں مبتلا ہوئے۔ “ قرآن کریم میںایک دوسری جگہ (آل عمران آیت ۰۱۱)میں تقویٰ کی راہ پر گامزن اُمت کی فضیلت کی وجہ امر بالمعروف اور نہی عن المنکر کو قرار دیتے ہوئے فرمایا ہے کہ ”اب دنیا میں تم وہ بہترین گروہ ہو جسے انسانوں کی ہدایت و اصلاح کے لیے میدان میں لایا گیاہے اور تم نیکی کا حکم دیتے ہو، بدی سے روکتے ہواور اللہ پر ایمان رکھتے ہو ۔“ ختم المرسلین رسول اللہ کے پیروﺅں کو بتایا گیا ہے کہ دنیا کی امامت و رہنمائی کے جس منصب سے بنی اسرائیل اپنی نا اہلی کے باعث معزول کیے جا چکے ہیں اس پر اب تم مامور کئے گئے ہو۔ اس کے لیے اخلاق و اعمال کے لحاظ سے اب دنیا میں تم سب سے بہترین گروہ ہو اور تم میں وہ صفات پیدا ہونی چاہئیں جو عادلانہ نظام و امامت کے لیے ضروری ہیں یعنی نیکی کو قائم کرنے اور بدی کو مٹانے کا جو جذبہ عمل،اور اللہ تعالیٰ کے وحدہ لا شریک ہونے کو اعتقادً اور عملاً اپنا الٰہ اور رب تسلیم کرنا لہٰذا اب یہ کام اُمت مسلمہ کے سپر د کیاگیاہے۔ اہل تقویٰ ،دعوت وتنظیم اور قیادت و نظام کی تبدیلی کی جدوجہد کرنے والوں کے لیے لازم ہے کہ اپنی ذمہ داریوں کو سمجھیں اور اُن غلطیوں سے بچیں جن کی وجہ سے اہل حق ناکامی کا شکار ہوتے رہے ہیں۔
    اسلامی اخلاقیات کے چار مراتب ہیں ۔ جن امور کو ہم اسلامی اخلاقیات سے تعبیر کرتے ہیں وہ قرآن و حدیث کی رُو سے چار درجات پر مشتمل ہیں ۔ ایمان ، اسلام، تقویٰ اور احسان ،یہ چاروں مراتب ایک دوسرے کے لیے فطری تربیت کا درجہ رکھتے ہیں۔ ہر مرتبہ اور درجہ پہلے سے پیدا اور لازماً اُسی پر قائم ہوتاہے اور جب تک پہلی منزل پختہ اور مستحکم نہ ہوجائے دوسری منزل کی تعمیر کا تصور نہیں کیاجاسکتا۔ اس پوری عمارت میں ایمان کو بنیادکی حیثیت حاصل ہے اسی بنیاد پر اسلام کی منزل تعمیر ہوتی ہے پھر اس کے اوپر تقویٰ کی منزل اور سب سے اوپر احسان کی منزل اُٹھتی ہے۔ ایمان نہ ہو تو اسلام و تقویٰ یا احسان کا سرے سے کوئی امکان ہی نہیں ہوسکتا ۔ ایمان کمزور ہو تو اس پر کسی دوسری منزل کا بوجھ نہیں ڈالاجاسکتا اگر زبردستی کوئی منزل کھڑی بھی کردی جائے تو وہ بہت کمزور ہوگی ۔اگر ایما ن محدود، تنگ اور سطحی ہو تو اسلام ، تقویٰ اور احسان بھی بس انہی حدود تک محدود رہیں گے، جب تک ایمان پوری طرح ، پختہ اور وسیع نہ ہوکوئی مردِ عاقل جو دین کا فہم رکھتا ہو اسلام، تقویٰ یا احسان کی منازل کی تعمیر کا کام نہیں کرسکتا۔ اس لیے تقویٰ کے لیے ناگزیر ہے کہ ایمان پوری گہرائی اور پختگی سے موجود ہو، اسی لیے تقویٰ سے پہلے اسلام اور احسان سے پہلے تقویٰ کی تعلیم ، پختگی اور توسیع ضروری ہے۔ ایمان و تقویٰ کے حوالہ سے اسلامی عقیدہ کی وضاحت بھی ناگزیر ہے۔ اسلامی تعلیمات کے مطابق بعض اُمور ایسے ہیں جن پر ایمان لانا ہر مسلمان کے لیے لازم ہے ۔ یہ تمام اُمور ایسے ہیں جو عقل سے معلوم نہیں کیے جاسکتے بلکہ یہ صرف وحی کے ذریعے ہی معلوم ہوسکتے ہیں ۔ تقویٰ کی تفصیل قرآن مجید اور صحیح احادیث میں بیان کی گئی ہے ۔ تقویٰ کے لیے درج ذیل چھ اُمور پر ایمان لانا ناگزیراسلامی بنیادی عقیدہ ہے اللہ پر ایمان، فرشتوں پر ایمان ، کتابوں پر ایمان ، انبیاءاور رسولوں پر ایمان ،آخرت پر ایمان اور تقدیر پر ایمان، یہی اسلامی عقیدہ مختصر ہو کر کلمہ طیبہ یعنی ( لا الہ الا اللہ محمد رسول اللہ ) اللہ کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمد اللہ کے رسول ہیں کا روپ دھار لیتاہے۔ “ ایمان اسلامی عقیدہ کی بنیاد ہے ، ایمان اُس تصدیق کا نام ہے جس میں امن و اطمینان پایا جاتاہو۔ ایمان زبان کے اقرار اور دل سے اُس کی تصدیق کرنے کا نام ہے،اقبال کے الفاظ میں :
    زباں سے کہہ بھی دیا لاالہ تو کیاحاصل
    دل و نگاہ مسلمان نہیں تو کچھ بھی نہیں
    غرض متقی انسان کے لیے ایمان و اسلام کی بنیادی رہنمائی سے بہرہ مند ہونا ضروری ہے تاکہ زندگی و آخرت کی کامیابی کی تگ و دو میں راہ راست حاصل ہو۔ اصل مطلوب تو یہی ہے ایمان متقی انسان کو جرا ¿ت اور بہادری سکھاتاہے۔ ایمان لانے سے انسان کے اندر حیرت انگیز طور پر جرا ¿ت و بہادری کا جذبہ پیدا ہوتاہے اور تقویٰ کی راہ پر چلنے والے زبانِ حال سے کہتے ہیں:
    کیا ڈر ہے جو ہو ساری خدائی بھی مخالف
    کافی ہے اگر ایک خدا میرے لیے ہے
    (مولانا محمد علی جوہر )
    شعوری طور پر ایمان و تقویٰ کی راہ اختیار کرنے والے کی شخصیت میں نکھار پیداہوتا ہے اورعظیم انقلاب سے روشناس ہو جاتاہے۔ وہ پہلے سے ایک مختلف انسان بن جاتاہے ۔ شک شبہ اور وہم و گمان کی دنیا سے نکل کر یقین اور خود اعتمادی کی فضاءمیں بلند مقام اختیار کرتاہے۔ دنیا کی ہر طاقت کے سامنے جھکنے کی بجائے صرف ایک اللہ کے آگے جھکتاہے ۔متقین دنیا کو بڑی متاع سمجھنے کی بجائے آخرت کی کامیابی اورجنت کے حصول کو ہی اپنی اصل منزل اور متاع قرار دیتے ہیں۔
    اہل تقویٰ کے لیے انعامات ربانی:
    1۔ حقیقت میں تقویٰ کی راہ اختیار کرکے ہی بندہ اللہ کا محبوب بن جاتاہے سورة توبہ آیت ۰۴میں اللہ کا ارشاد ہے ”بے شک اللہ متقیوں سے محبت کرتاہے ۔“ رسول اللہ کا فرمان ہے کہ” یقیناً اللہ تعالیٰ ایسے بندوں سے محبت کرتاہے جو متقی، غنی اور گمنام زندگی بسر کرنے والے ہوں۔ “
    2۔ تقویٰ کی بناءپر اللہ کی معیت اور قرب ملتاہے تقویٰ ایسا ذریعہ ہے جس سے اللہ تعالیٰ اپنے بندوں کی مدد فرماتاہے اور انہیں اپنی خاص رحمتوں سے نوازتاہے۔ سورة البقرة ،آیت 194میں اللہ کا ارشاد ہے کہ ”اللہ کا تقویٰ اختیار کرلو ،کہ اللہ متقی لوگوں کے ساتھ ہے۔ “ اور سورة النحل آیت 128میں ارشاد ہے کہ ” یقیناً اللہ متقی اور نیکی کرنے والے لوگوں کے ساتھ ہوتاہے۔ “ حافظ ابن کثیر تفسیر ابن کثیر میں لکھتے ہیں کہ سو یہی وہ لوگ ہیں ، کہ اللہ تعالیٰ ان کی حفاظت فرماتاہے ، ان کی نگہداشت کرتاہے ، اور ان کے دشمنوں اور مخالفین کے مقابلہ میں ان کی نصرت ، تائید اور مدد فرماتاہے۔
    3۔ تقویٰ اختیار کرنے والوں پر اللہ تعالیٰ کی رحمت اور برکتوں کا نزول ہوتاہے۔ سورة الاعراف آیت 96میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے ”اور اگر بستیوں والے ایمان لے آتے اور تقویٰ کی روش اختیار کرتے تو یقیناً ہم اُن پر آسمان و زمین سے برکتوں کے دروازے کھول دیتے لیکن انہوںنے جھٹلا دیا تو ہم نے اُن کے اعمال کی وجہ سے اُن کو پکڑ لیا۔ “ تفسیر الکشاف میں علامہ زمخشری ؒ لکھتے ہیں کہ ”یعنی اگر تم دینی معاملات میں آنے والی سختیوں اور تکلیفوں پر صبر کرو گے اور اللہ سے ڈرتے ہوئے اُس کی حرام کردہ چیزوں سے پرہیز کروگے تو تم اللہ کی حفاظت میں آجاﺅ گے جس کے نتیجے میں تمہارے دشمنوں کی کوئی چال تمہیں نقصان نہیں پہنچا سکے گی۔ سورة الاعراف میں ہی ارشاد باری تعالیٰ ہے ”اور میری رحمت تمام اشیاءکا احاطہ کیے ہوئے ہے پس میں اس کو ان لوگوں کے لیے ضرور لکھوں گا جو تقویٰ اختیار کرتے ہیں ، زکوٰة ادا کرتے ہیں اور وہ ہماری آیات کے ساتھ ایمان لاتے ہیں۔ “
    4۔ تقویٰ کی بدولت اللہ سے گناہوں کی معافی اور اجر عظیم کی توقع ہوجاتی ہے۔ اللہ کا وعدہ ہے کہ وہ تقویٰ اختیار کرنے والے کے گناہ معاف کردیتا ہے اور ان کے لیے اجر عظیم کا وعدہ ہے ۔ سورة الطلاق ،آیت۵میں اللہ کا ارشاد ہے ”اور جو شخص اللہ تعالیٰ کا تقویٰ اختیارکرے گا وہ اُس کے گناہ معاف فرمادے گا اور اُس کو اجر عظیم دے گا ۔ زادالمسیر میں علامہ ابن الجوزیؒ لکھتے ہیں ” اور جو شخص اللہ کاتقویٰ اس کی اطاعت کے ذریعہ اختیار کرے گا وہ اُس کے گناہوں کو مٹا دے گا اور آخرت میں اُس کو اجر عظیم عطا فرمائے گا۔“
    5۔ تقویٰ کی راہ سے ہی انسان کو نوربصیرت عطا ہوتاہے ۔ دل میں تقویٰ و پرہیزگاری کا جذبہ موجزن ہوتو حق تعالیٰ برائی اور اچھائی کے درمیان فرق کرنے کی بصیرت عطا فرمادیتاہے جیسا کہ اللہ نے سورة الانفال ،آیت ۹۲میں ارشاد فرمایا ہے کہ ”اے ایمان والواگر تم اللہ کا تقویٰ اختیار کرو گے تو وہ نوربصیرت عطا کرے گا اور تمہارے گناہوں کو مٹا دے گا اور تمہیں معاف کردے گا اور اللہ عظیم فضل والاہے۔
    6۔ تقویٰ اختیار کرنے سے جہنم کی آگ سے بچاﺅ کی صورت پیدا ہوتی ہے۔ تقویٰ اختیار کرنے کی وجہ سے اللہ اپنے بندوں کو جہنم سے آزادفرمادے گا ۔ سورة مریم آیت ۱۷۔۲۷میںارشاد باری تعالیٰ ہے”اور تم میں سے ہر شخص پل صراط پر سے ضرور گزرے گا یہ آپ کے رب کا حتمی فیصلہ ہے ۔ پھر ہم ان لوگوں کو بچالیں گے جو دنیامیں اللہ سے ڈرتے تھے اور ظالموں کو اس میں گھٹنوں کے بل گراکر چھوڑیں گے ۔ “ یعنی جب تمام مخلوق جہنم کی آگ کے اوپر سے گزر ے گی اور کافر وگناہ گار اپنے گناہوں کے بقدر اس میں گر جائیں گے تو اللہ تعالیٰ تقویٰ اختیار کرنے والوں کو اُن کے اعمال کے مطابق نجات دے گا ۔ اُن کا پل صراط عبور کرنا اور اس میں سرعت وتیزی ان کے اعمال دنیا کے مطابق ہوگی ۔
    7۔ تقویٰ کی راہ پر چلنے والے روزِ قیامت ابدی نعمتوں والی جنتوں کے وارث بنادیئے جائیں گے ان میں وہ خوش و خرم قیام پذیر ہوں گے۔ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے (سورة الطور ،آیت19-18)”بے شک اللہ سے ڈرنے والے لوگ جنتوں اور نعمتوں میںہوں گے اُن کا رب انہیں جہنم کے عذاب سے بچائے گا اُن سے کہا جائے گاکہ تم لوگ دنیا میں جو نیک اعمال کرتے تھے اُن کے بدلے میں مزے سے کھاﺅ اور پیو ۔ “ اہل تقویٰ رب کائنات اور قادرِ مطلق کی بنائی جنت میں ہوں گے جہاں کوئی لغو ، بے ہودہ اور گناہ کی بات نہیں ہوگی یعنی انہیں اپنے رب کا قرب ، اعلیٰ ترین مقام اور جنت کا نہایت پاکیزہ ماحول حاصل ہو گا۔
    8۔ متقی لوگوں کے لیے اکرام الٰہی ہوگا ۔ جو شخص جتنا زیادہ متقی ، پرہیزگار یعنی اللہ اور اُس کے رسول کا فرمانبردارہوگا اتنا ہی وہ اللہ کے ہاں معززاور اونچا ہوگا۔ متقی آدمی اگرچہ خاندانی اعتبار سے پست ہوگا لیکن غیر متقی خاندانی آدمی پر فوقیت رکھتاہوگا۔ سورة الحجرات ، آیت۳۱ میںارشاد باری تعالیٰ ہے کہ ”لوگوہم نے تمہیں مرد اور عورت سے پیدا کیاہے اور ہم نے تمہیں قوموں اور قبیلوں میں اس لیے بانٹ دیا ہے تاکہ تم ایک دوسرے کو پہچانو ، بے شک اللہ کے نزدیک سب سے معزز وہ ہے جو سب سے زیادہ پرہیز گار ہے، بے شک اللہ بڑا جاننے والا ، ہر چیز کی خبر رکھنے والا ہے۔ “ رسول اللہ کا ارشادگرامی ہے ”تقویٰ باعث عزت و کرم ہے۔ “
    ٭....٭....٭
     

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں




سوشل میڈیا لنکس