پوری امت کو بحرانوں سے نکالنے کے لیے قرآن و سنت کی بنیاد پر متحد ہونا پڑے گا ،لیاقت بلوچ

نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان لیاقت بلوچ نے اسلام آباد اور گوجرانوالہ میں سیرت کانفرنسوں سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ خاتم النبیین حضرت محمد کا امتی ہونا اہل ایمان کی اصل بنیاد ہے ۔ پوری امت کو بحرانوں سے نکالنے کے لیے قرآن و سنت کی بنیاد پر متحد ہونا پڑے گا ۔ فرقہ واریت ، تکفیریت کا پھیلاﺅ ،غیر ذمہ دارانہ تقاریر ، تحریر ، مجمع کو گرمانے کے لیے اشتعال انگیز اسلوب بیان غیر ضروری اور نامناسب ہے ۔مقررین ، ذاکرین ، واعظین دل آزاری ، دوسروں کے مسالک کو نیچا دکھانے ، اپنے آپ کو کامل اور دوسروں کو احمق جاننے کی روش ترک کریں ۔اہل ایمان میں فرقہ واریت ، تکفیریت عالمی ایجنڈا ہے لیکن اندرونی سہولت کار تباہی لارہے ہیں ۔فرانس کے صدر نے 2ارب مسلمانوں کی دل آزاری کی ہے ۔ فرانس کو اقوام متحدہ سیکورٹی کونسل کا مستقل ممبر رکھنا انسانیت کی توہین ، دنیا غیر محفوظ ہے ۔ حکومت ریاست مدینہ کا اسلامی نظام نافذ کر ے ۔عوام اپنے مسائل کا حل چاہتے ہیں ، علماء، محققین اسلام کے معاشی نظام اور سود کے خاتمہ کے لیے ماحول بنائیں اور اپنا کردار ادا کریں ۔
لیاقت بلوچ نے لاہور میں کسانوں پر تشدد ، گرفتاریوں کی مذمت کی ۔ انہوںنے کہاکہ زراعت قومی معیشت کی جان ہے۔ حکومتی پالیسیوں سے زراعت زبوںحالی کا شکار ہے ۔ تشدد گرفتاریاں حکومت کا آمرانہ ظالمانہ اقدام اور زراعت و کسان دشمنی ہے ۔ کسانوں پر تشدد کی بجائے حکومت زراعت ، کسانوں کے مسائل حل کرے ۔ گنے کپاس اور گندم کے کاشتکار حقیقی معنوں میں پریشان ہیں ۔ وفاقی صوبائی حکومتیں مسئلہ حل کریں ۔
لیاقت بلوچ نے امریکی صدارتی انتخاب پر تبصرہ کرتے ہوئے کہاکہ امریکی صدارتی نظام رفتہ رفتہ فرسودہ ، تضادات اور خرابیوں کا شکار ہوچکاہے ۔ امریکہ کا دو جماعتی نظام اور ابھرنے والی قیادت صرف امریکہ نہیں ، پوری دنیا کے لیے خطرناک ہوچکی ہے ۔ امریکہ کے عوام اور پالیسی سازوں کو امریکی صدارتی نظام کی جگہ مکمل بااختیار پارلیمانی نظام لاناہوگا۔ پاکستانیوں میں صدارتی نظام کا راگ الاپنے والے سبق سیکھیں اور آئین کے مطابق وفاقی پارلیمانی نظام کو اس کی روح کے مطابق نافذ کریں ۔دریں اثنا لیاقت بلوچ نے سینئر صحافی اورارد و ڈائجسٹ کے بانی ڈاکٹر اعجاز حسن قریشی کے انتقال پر دکھ کا اظہار کیا اور ان کے بھائی الطاف حسن قریشی سے تعزیت اور دعائے مغفرت کی ۔

-->