حکومت گرانا آسان مگر نظام تبدیل کرنا مشکل کام ہے ۔ہم چہرے نہیں نظام بدلنا چاہتے ہیں ۔سینیٹر سراج الحق

امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ حکومت گرانا آسان مگر نظام تبدیل کرنا مشکل کام ہے ۔ہم چہرے نہیں نظام بدلنا چاہتے ہیں۔ہماری لڑا ئی ظلم و جبر اور اس استحصالی نظام سے ہے جو پون صدی سے کروڑوں عوام کو غربت مہنگائی بے رو زگاری اور بدامنی کی چکی میں پیس رہا ہے ۔لوگوں کو تعلیم صحت روز گاراور انصاف نہیں مل رہا ۔عدالتوںمیں لاکھوں مقدمات زیر التوا ءہیں ،پیسے کے بغیر یہاں انصاف نہیں ملتا۔سرکاری ہسپتالوں سے غریب کو ڈسپرین کی ایک گولی نہیں مل رہی ،عدالتوں میں انصاف بکتا ہے اور جس کے پاس کروڑوں اور اربوں نہیں وہ ساری زندگی عدالتوں میں رل جاتا ہے ۔ جماعت اسلامی دولت کی منصفانہ تقسیم اور عدل و انصاف روز گار اور تعلیم کے دروازے عوام کیلئے کھولنا چاہتی ہے ۔ہم چاہتے ہیں کہ ملک میں یکساں نظام تعلیم ہو ،جس سکول میں حکمرانوں کے بچے پڑھتے ہیں اس میں غریب کا بچہ بھی تعلیم حاصل کرسکے ۔بچوں اور بچیوں کے اغواءاور زیادتی کے بعد قتل کے واقعات بڑھ گئے ہیں۔یہاں کسی کی جان مال اور عزت محفوظ نہیں۔ 73سال سے عوام ظالم جاگیرداروں اور بے رحم سرمایہ داروں کے چنگل میں پھنسے ہوئے ہیں ۔چند خاندان اقتدار پر مسلط ہیں اور وہی باریاں لے رہے ہیں یتیم بچوں بیوہ خواتین اور مساکین کی کفالت کی ذمہ داری ریاست کی ہے۔غریب ساری عمر محنت مزدوری کرنے اور اپنا خون پسینہ بہانے کے باوجود پیٹ بھر کر نہیں کھا سکتا ۔ یہ ظلم کا نظام ہے جو زیادہ دیر قائم نہیں رہ سکتا۔عوام کو اس نظام سے بغاوت کیلئے نکلنا اور جماعت اسلامی کا ساتھ دینا ہوگا۔ان خیالات کا اظہار انہوں کوہاٹ میں الخدمت فاﺅنڈیشن کے زیر اہتمام آغوش سنٹر کی افتتاحی تقریب سے خطاب میں کیا۔اس موقع پر الخدمت فاو ¿نڈیشن کے نائب صدر مشتاق مانگٹ، صوبائی صدر خالد وقاص،سابق رکن قومی اسمبلی شبیر احمد خان، بابری بانڈہ کوہاٹ کی ممتاز سماجی شخصیت حاجی غلام علی آفریدی بھی موجود تھے۔
سینیٹر سراج الحق نے الخدمت فاو ¿نڈیشن خیبر پختونخواکے زیر اہتمام یتیم بچوں کی کفالت کے لئے 12کروڑ روپے کی لاگت سے 13کنال رقبے پر محیط جدید سہولیات سے آراستہ آغوش الخدمت ہوم کوہاٹ کا افتتاح کیا جس میں 200 یتیم بچوں کی کفالت کے لئے معیاری سہولیات فراہم کی گئی ہیں۔سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ بے کسوںمساکین اور نادار لوگوں خاص طور پر یتیم بچوں کی تعلیم وتربیت اور کفالت کا انتظام کرنا حکومت اور ریاست کی ذمہ داری ہے مگر حکومت کواپنی کسی ذمہ داری کا کوئی خیال نہیں۔انہوں نے کہا کہ حکومت نے کرونا وباءکے دوران بھی متاثرین کیلئے 12 سو ارب روپے کا اعلان کیا مگر کسی کو کوئی پتہ نہیں کہ وہ بارہ سو ارب روپے کہاں گئے اور کس کو دیئے گئے ۔حکمرانوں نے کورونا وباءسے متاثرین کیلئے باہر سے آنے والی اربوں روپے کی امداد کہاں خرچ کی اس کا بھی حساب کتاب ہونا چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ آٹھ اکتوبر 2005کے زلزلہ متاثرین ابھی تک حکومت کی طرف دیکھ رہے ہیں ،15سال گزر گئے سابقہ اور موجودہ حکومت نے ان بے گھر ہونے والوں کو کوئی سہار ا نہیں دیا۔ انہوں نے کہا کہ الخدمت فاﺅنڈیشن کے زیر اہتمام اس وقت ملک میں 15ہزار سے زائد یتیم بچوں کی کفالت کررہی ہے ۔ سینیٹر سراج الحق نے تختی کی نقاب کشائی کرکے کوہاٹ الخدمت آغوش ہوم کا باقاعدہ افتتاح کیا۔

-->