News Detail Banner

ملک میں مہنگائی کی شرح خطے میں سب سے زیادہ، روپیہ بے وقعت ہو گیا۔ سراج الحق

16دن پہلے

لاہور17 ستمبر2022ء

امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے کہا ہے کہ ملک میں مہنگائی کی شرح خطے میں سب سے زیادہ، روپیہ بے وقعت ہو گیا۔ پی ڈی ایم نے ماضی میں مہنگائی کے خلاف احتجاج کیے، اقتدار میں آ کر عوام پر ظلم کی انتہا کر دی۔ پی ٹی آئی اور پی ڈی ایم معیشت کی تباہی کی ذمہ دار ہیں۔ بیڈگورننس اور تباہ کن معاشی پالیسیوں کی وجہ سے ملک کے حالات ٹھیک نہیں ہو رہے۔ سودی معیشت اور کرپشن نے ملک کو دیمک کی طرح چاٹ لیا۔ حکمران سیاسی جماعتیں وڈیروں کے کلب ہیں، عام آدمی کو ان جاگیرداروں اور ظالم سرمایہ داروں سے بھلائی کی کوئی توقع نہیں۔ حقیقی تبدیلی صرف اسلامی نظام سے آئے گی، ملک اسلام کے نام پر حاصل ہوا، اسلام ہی اس کی ترقی و خوشحالی کا ضامن ہے۔ قوم کو لڑانے اور تقسیم کرنے کے ایجنڈے پر گامزن حکمران جماعتیں حالات کی نزاکت کو جانتے ہوئے بھی خطرناک کھیل کھیل رہی ہیں۔ حکمرانوں نے تباہ کن سیلاب کے دوران بھی آپسی مفادات کے لیے جنگ جاری رکھی۔ حکمران آف شور کمپنیوں اور بیرون ملک بنکوں سے ذاتی اثاثے اور لوٹی ہوئی دولت واپس لائیں۔ ایک ایجنڈے کے تحت عوام کو مکمل طور پر آئی ایم ایف کی غلامی میں دھکیل دیا گیا۔ استعماری طاقتیں پاکستان کے فیصلے اپنے ایجنٹوں کے ذریعے ملک میں نافذ کرتی ہیں۔ قوم اپنے حقوق کے لیے آواز بلند کرے، مافیاز سے نجات کے لیے جدوجہد کرنا ہر محب وطن شہری پر لازم ہو گیا۔ ان خیالات کا اظہار انھوں نے منصورہ میں سیلابی صورت حال اور بحالی کے اقدامات کے جائزہ کے لیے ایک مشاورتی اجلاس میں گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ سیکرٹری جنرل امیر العظیم اور سیکرٹری اطلاعات قیصر شریف بھی اس موقع پر موجود تھے۔ 

امیر جماعت نے کہا کہ سندھ، بلوچستان، خیبرپختونخوااور جنوبی پنجاب کے کروڑوں مکینوں کا سب کچھ سیلاب کی نذر ہو گیا، لاکھوں ایکڑ زرعی اراضی، شہر، دیہات پانی کے تالابوں میں تبدیل ہو چکے ہیں۔ لاکھوں مویشی پانی میں بہہ گئے، وفاقی اور صوبائی حکومتوں نے متاثرین کی مدد میں سستی دکھائی۔ لوگ سرکاری امداد کی غیرشفاف تقسیم کی شکایات کر رہے ہیں۔ ایک طرف آدھی آبادی سیلاب کی وجہ سے مشکلات میں ہے اور دوسری جانب کروڑوں لوگ مہنگائی، بے روزگاری اور لوڈشیڈنگ کے عذابوں کا مقابلہ کر رہے ہیں۔ حکمرانوں نے وسائل سے مالا مال ملک کو تباہ کر دیا۔ حکومتوں کی پالیسیاں صرف قرض لینے تک محدود ہیں۔ موجودہ اور سابقہ حکومتوں نے مل کر پاکستان کو اس نہج پر پہنچایا۔ مارشل لائی حکومتیں اور نام نہاد جمہوری ادوار ڈلیور کرنے میں ناکام ہو گئے۔ 

سراج الحق نے کہا کہ پی ٹی آئی نے پونے چار برسوں میں ہر شعبے کو تباہ کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی تو پی ڈی ایم اور پیپلزپارٹی کی موجودہ  حکومت بھی سابقہ پالیسیوں کا ہی تسلسل ہے۔ حکمران جماعتوں کی سیاست کا انحصار اسٹیبلشمنٹ کی سپورٹ پر ہے، سبھی دودھ کے فیڈر کے لیے لڑ رہے ہیں۔ جن لوگوں نے مہنگائی کے خلاف جلسے جلسوس اور ریلیاں نکالیں انھوں نے چند ماہ میں ہی بنیادی ضروریات کی اشیا کی قیمتوں میں سو گنا سے زیادہ اضافہ کردیا۔ آج آٹا، چینی، گھی، دالیں، سبزیاں،ادویات، پٹرول، بجلی اور گیس سفید پوش آدمی کی پہنچ سے دور ہو چکے ہیں۔ ملک میں لاکھوں پڑھے لکھے نوجوان بے روزگار، ذرائع آمدن ختم ہونے کی وجہ سے گھر گھر غربت ناچ رہی ہے۔ ایسا دکھائی دیتا ہے کہ ملک کا مجموعی نظام ایڈہاک کی بنیادوں پر چل رہا ہے۔ انھوں نے کہا کہ حکمران عوام کا مزید امتحان نہ لیں، اقتدار پہ براجمان طبقہ اگر لوگوں کو ریلیف نہیں دے سکتا تو گھر چلا جائے۔ 

امیر جماعت نے کہا کہ بہتری کا واحد راستہ اسلامی نظام ہے۔ جماعت اسلامی کی سیاست اور جدوجہد کا مقصد ملک کو قرآن و سنت کا نظام دینا ہے۔ ہم سودی معیشت کے خلاف جنگ کو حتمی مرحلے تک لے کر جائیں گے۔ جماعت اسلامی کے کارکنان اپنی جدوجہد میں مزید تیزی لائیں اور قرآن و سنت کا پیغام گھر گھر پہنچائیں تاکہ ملک میں پرامن اسلامی انقلاب کی راہ ہموار ہو۔ انھوں نے کہا کہ جماعت اسلامی واحد جماعت ہے جو پاکستان کو بحرانوں سے نکالنے کی اہلیت رکھتی ہے، قوم ہمارا ساتھ دے۔