Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

اہم خبریں

ریلیف کے دعوے بے نقاب،حکومت نے کھاد پر سب سڈی ختم کرکے زراعت پر ڈرون حملہ کیا ہے۔


 لاہور11 جنوری 2017ء: کسان بورڈ پاکستان کے صدر چوہدری نثار احمد اور سیکرٹری جنرل ارسلان خاں خاکوانینے اپنے مشترکہ بیان میںکھاد پر سب سڈی ختم کرنے کے اعلان کو زرعی معیشت پر ڈرون حملے سے تعبیر کرتے کہاہے کہ تیل اور بجلی کی قیمتیں پہلے ہی کسانوں کی دسترس سے باہر ہیں اب کھاد کی قیمتوں پر سب سڈی ختم کرنے سے کھادوں کی قیمتوں میں پانچ سو سے ہزار روپے فی بوری اضافہ ہو جائے گا جس سے زرعی مداخل میں مزید اضافہ سے زراعت کا بھٹہ بیٹھ جائے گا۔ ٹیوب ویل اور، زرعی مشینری پہلے ہی مہنگے ہو چکے ہیں ۔ موجودہ حکومت نے عوام کوکسی قسم کاکوئی ریلیف نہیںدیا بلکہ بجلی، گیس، پٹرولیم ،بیج ،زرعی ادویات کی قیمتیں پہلے ہی کسانوں کی دسترس سے دور ہیں اب کھاد کی قیمتوں میں اضافہ سے رہی سہی کسربھی نکل جائے گی اور کھادوں کیاستعمال میں بے انتہا کمی سے زرعی پیداوار میں بھی بے انتہا کمی ہوجائے گی۔ حکومت ایک طرف زراعت پر اربوں روپے سب سڈی دینے کے بلند بانگ دعوے کر کے کسانوں کو بے وقوف بنا رہی ہے جبکہ دوسری طرف کھاد پر سب سڈی ختم کرکے کسانوں کی مشکلات میں اضافہ کر رہی ہے۔زرعی مداخل کی قیمتیں بڑھنے سے فصلوں کی لاگت کاشت مزید بڑھ جائے کی جس سے ہماری نقد آور فصلات چاول ،کپاس،گنے اور دیگر فصلات کی قیمتیں بھی بڑھ جائیں گی اور ہم بین الاقوامی منڈی میں یہ فصلیں بر آمد کرنے میںناکام ہو جائیں گے کیونکہ بیشتر ممالک زراعت پر کھربوں روپے کی سب سڈی دیگر زرعی اجناس کی قیمتوں کو کنٹرول میں رکھتی ہے اور کسانوں کو سہارا دیتی ہے۔۔ کھاد اور دیگر زرعی مداخل کی قیمتوں میں ہوشربااضافہ سے کسانوں کے مسائل میں بہت اضافہ ہو گا اورملک کی زراعت تباہ ہو جائیگی۔ اس وقت ملک کے ستر فی صد کسان مہنگائی اور ناکام حکومتی پالیسیوں سے سخت نالاں ہیں مگر حکومت معاشرے کے پسے ہوئے افراد اور مظلوم کسانوں کی غیرت کو للکار کر سڑکوں پر آنے کے لیے مجبور کر رہی ہے۔ حکومت فوری طور پر حالیہ اضافے کو واپس لے وگرنہ واپس نہ لیا تو پورے لاہور کا پہیہ جام کر دیں گے۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں







سوشل میڈیا لنکس