Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

اہم خبریں

عالمی سطح پر جہاد کے جذبے اور فلسفے کو بدنام کرنے کی سازشیں ہورہی ہیں۔عبدالغفار عزیز


 کراچی08جنوری 2017ء: جماعت اسلامی پاکستان کے ڈائریکٹر امور خارجہ عبد الغفار عزیز نے کہا ہے کہ مصر ، شام ، فلسطین ، کشمیر اور بنگلہ دیش اور دیگر ممالک میں اسلامی تحریکوں سے وابستہ افراد شدید آزمائشوں،کٹھن حالات اور مشکلات کا شکار ہیں لیکن ان کا عزم اور حوصلہ بلند ہے اور وہ ایک کوہ گراں کی طرح صبر واستقامت ، جرأت و بہادری اور قربانیوں کے ساتھ کھڑے ہوئے ہیں اور اسلامی تحریکیں مسلسل پیش رفت کررہی ہیں، اسلامی تحریکوں نے کئی ممالک میں انتخابات اور جمہوری عمل کے ذریعے بھرپور کامیابی حاصل کی ہے اور عوامی حمایت نے اسلامی تحریکوں کی قیادت پر اعتماد کا اظہار کیا ہے لیکن امریکہ اور مغربی طاقتوں کو مسلمانوں کی یہ پیش رفت ایک آنکھ نہیں بھاتی،جہاد پر ایمان رکھے بغیر کسی مسلمان کا ایمان مکمل نہیں ہوسکتا ۔ فلسطین ، کشمیر اور افغانستان کے میدان گواہ ہیں کہ جہاد اور شوق شہادت کے جذبے کو کوئی طاقت شکست نہیں دے سکتی ،عالمی سطح پر ایسی سازشیں ہورہی ہیں کہ جہاد کے جذبے اور فلسفے کو بدنام کیا جائے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے اتوار کے روز ادارہ نور حق میں جماعت اسلامی کراچی کے اجتماع ارکان سے ’’عالم اسلام کی صورتحال اور اسلامی تحریکوں کی پیش رفت ‘‘کے موضوع پر خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ اجتماع ارکان سے امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن اور سکریٹری کراچی عبد الوہاب نے بھی خطاب کیا۔ حافظ نعیم الرحمن نے مختلف تنظیمی و تحریکی اور دعوتی وسیاسی امور کے حوالے سے ارکان جماعت کے سوالات کے جوابات دیے اور ان کو ہدایت اور رہنمائی فراہم کی ۔جبکہ حافظ عبد الوحید نے درس قرآن بھی پیش کیا اور جماعت اسلامی کراچی کے مختلف شعبہ جات کی رپورٹز بھی پیش کی گئی۔عبد الغفار عزیز نے کہا کہ اسلامی تحریکوں میں شامل نوجوان اور بزرگ عزیمت ،جدوجہد اورقربانیوں کے راستے پر گامزن ہے ۔ غزہ گزشتہ گیارہ سال سے حصار میں ہے اور سینکٹروں افراد جن کو علاج کی ضرورت تھی وہ اس حصار سے نہ نکلنے کی وجہ سے اپنے رب سے جاملے ۔ غزہ کے اندر ہر نماز میں اتنی بڑی تعداد ہوتی ہے کہ علام اسلام کی عام مساجد میں جمعہ کی نمازوں میں ہوتی ہیں ۔ غزہ کی دیواروں میں پر جگہ جگہ لکھا ہوا ہے کہ جنت کا راستہ اللہ کے گھر سے ہوکر جاتا ہے ۔حضور اکرم ؐ نے فرمایا ایک دوسرے کے ساتھ محبت بڑھانے کا ذریعہ یہ ہے کہ آپس میں سلام کرو اور سلامتی کی دعا عام کرو ۔ اللہ تعالیٰ سے عافیت کی دعا کرنی چاہیئے لیکن اگر کوئی امتحان اور مقابلہ کا مرحلہ آجائے تو پھر پیچھے نہ ہٹا جائے ۔ ساری اسلامی تحریکات کی شناخت یہ ہے کہ وہ نبی ؐ کی سنت پر عمل پیرا ہیں اور ان سے وابستہ افرادہر قسم کے حالات میں بھی ہر پیر اور جمعرات کو روزہ رکھتے ہیں اور جب وہ جیلوں میں جاتے ہیں تو ان کی قوت اور طاقت میں اور اضافہ ہوتا ہے ۔ قاہرہ کے اندر 80فیصد مساجد میں اسلامی تحریک سے وابستہ افراد کی تنظیم موجود ہیں اور سرگرمیاں جاری ہیں اور قرآن و سنت کی تعلیمات دی جارہی ہیں۔ فلسطینی بچوں کے اندر یہ جذبہ موجود ہے کہ میں بھی جب بڑاہوں گا تو مسجد اقصیٰ کی آزادی کی جدوجہد کروں گا ۔انہوں نے کہا کہ چند ہفتہ قبل اسرائیل نے تیونس کے ایک گاؤں میں جاکر محمد الظواہری کو شہید کیا صرف اس وجہ سے کہ وہ مسجد اقصیٰ کو اسرائیل کے قبضے سے آزاد کرانے کا عزم رکھتے تھے اور لوگوں کو اس جدوجہد کے لیے تیار کرتے تھے ۔عبدالغفار عزیز نے کہا کہ شام کے اندر گزشتہ پانچ سال میں5لاکھ افراد شہید ہوچکے ہیں ۔بشار الاسد نے ظلم کی انتہاء کردی ہے اور اس کی سفاکیت کو سپورٹ کرنے کے لیے درجنوں گروہ منظم کیے گئے ہیں جن کو عالمی سامراجی قوتوں کی سرپرستی حاصل ہے ۔ مصر میں جنرل سیسی کی افواج مسلم نوجوان بزرگوں ہی نہیں خواتین اور بچوں کو بھی شہید کررہی ہیں۔عالمی سطح پر اب ترکی کو بھی نشانہ بنایا جارہا ہے اور اسے کمزور اور تباہ کر نے کی سازش کی جارہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ مصر کے اندر اخوان کے مرشد عام نے واضح اعلان کیا ہے کہ ہم پر امن رہیں گے اور ہماری پُرامن جدوجہد ہی ہمارا راستہ اور ہتھیار ہے ۔ مصر میں اخوان کے قیدیوں کو عدالتوں کے اندر پنجروں میں بند کر کے پیش کیا جاتا ہے لیکن ان کا عز م ہے کہ وہ اپنا مشن جاری رکھیں گے اور ان کا یقین ہے کہ اللہ تعالیٰ ان کو فتح اور نصرت عطا فرمائے گا ۔ مصر کے اندر عوام جنرل سیسی کے خلاف اور معزول صدر مرسی کے ساتھ ہیں ۔انہوں نے کہا کہ حضرت ابوالاعلی مودودی ؒ اور حضرت حسن البنا نے اسلامی تحریکوں کی آبیاری اور رہنمائی کی ہے اور آج دنیا بھر میں ان دونوں رہنماؤں کی فکر اور فلسفے کی بنیاد پر اسلامی تحریکیں سر گرم عمل ہیں ۔ اس وقت تیونس کے پارلیمنٹ میں اسلامی تحریک کی نشستیں حکمران پارٹی کی نشستوں سے زیادہ ہیں لیکن حکومت بنانا ان کا مقصود نہیں ہے ان کا اصل مقصد اور ان کی نظر مستقبل پر ہے ۔ جب ’’تحریک وحدت‘‘ ہر شہری کے دل کی آواز اور ترجمان بن جائے گی۔حافظ نعیم الرحمن نے کہا کہ جماعت اسلامی کراچی کے عوام کے مسائل کے حل کی جدوجہد جاری رکھے گی اور شہریوں کے دیرینہ مسائل ٹرانسپورٹ کی کمی ، سڑکوں کی خستہ حالی ، بجلی وپانی کے مسائل ، نادرا کی نااہلی اور دیگر بلدیاتی و شہری مسائل پر حکومت اور متعلقہ اداروں کو متوجہ کرتی رہے گی اور ان کے حل کے لیے مثبت کردار ادا کرے گی ۔انہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی امت مسلمہ کے ایک جسد واحد ہونے کے تصور پر یقین رکھتی ہے اور دنیا بھر میں جہاں جہاں مسلمانوں پر ظلم ہورہا ہے ہم اس کے خلاف آواز اٹھاتے رہیں گے ۔ سامراجی قوتوں کے عزائم اور سازشوں کو بے نقاب کرتے رہیں گے ۔#

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس