Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

قرار داد برائے مزدور مسائل /نجکاری


  جماعت اسلامی پاکستان کی مرکزی مجلس شوریٰ کا یہ اجلاس اس امر پر تشویش کا اظہار کرتا ہے کہ موجودہ حکومت نے مزدور طبقے کو یکسر نظر انداز کر کے بے پنا ہ مسائل میں دھکیل دیا ہے ۔آج کا یہ اجلاس حکومت سے مندرجہ ذیل مطالبات پر فوری عمل درآمد کا مطالبہ کرتا ہے ۔
٭ 2016-17ءکے بجٹ میں موجودہ کم سے کم اجرت میں معقول اضافہ کیا جائے اور اس کے نفاذ کو یقینی بنایا جائے ۔
٭ غیر منظم مزدوروں (کھیت مزدور،منڈی ،بازار،بھٹہ،ریڑی ،تعمیرات اور گھریلو مزدور)پرIRA.2012کا اطلاق نہیں ہوتا انہیں بھی ٹھیکداری نظام کے ذریعے قانونی مراعات سے محروم کیا گیا ہے ،ان کے لئے فوری اور جامع قانون سازی کی جائے ۔
٭ ایمپلائز اولڈ ایج بینفٹ(ای او بی آئی )پینشن میں کئی سالوں سے اضافہ نہیں کیا گیا معقول اضافے کے ساتھ کم از کم پینشن 10ہزارروپے یقینی بنائی جائے ۔
٭ لیبر ویلفیئر ڈیپارٹمنٹس کے آفیسرز ،رجسٹرار یونین اور نیشنل انڈسٹریل ریلیشن کمیشن حکومتی و سرمایہ داروں کی ایماءپر حقیقی ٹریڈ یونینز کی حوصلہ شکی کرتے ہیں ۔ان اداروں میں بااختیار اور باصلاحیت و دیانت دار افسران کو تعینات کیاجائے ۔
٭ ورکرز ویلفیئر فنڈ کی تعلیمی گرانٹ ،میرج گرانٹ ،ڈیتھ گرانٹ سے ہزاروں ورکرز محروم ہیں ۔ان گرانٹس کو بحال کیاجائے ۔
٭ ورلڈ بنک اور آئی ایم ایف کے دباو ¿ پر قومی اداروں کی نجکاری ایک خطرناک کھیل ہے ۔جس سے ایک طرف قومی سلامتی کو خطرہ ہے دوسری طرف خود انحصاری ختم کر کے اغیار پر انحصار معاشی تباہی کا راستہ ہے اور یہ آئین کی خلاف ورزی ہے ۔واپڈا کی تشکیل نو سے بنائی جانے والی ڈسٹریبیوشن کمپنیوں ،OGDCL،پی آئی اے ،پاکستان اسٹیل ،بن قاسم پورٹ کی برتھوں ،پنجاب کے تعلیمی اداروں سمیت دیگر تمام قومی اداروں کی نجکاری کے فیصلہ کو واپس لیا جائے اور ان کی کارگردگی کو بہتر بنانے کے لئے اورعوام کو سہولت فراہم کرنے کے لئے خصوصی اہتمام کیاجائے ۔
٭ تمام قومی اداروں میں کرپشن کے خاتمے کے لئے واضح اقدامات کئے جائیں اور کرپٹ عناصر کو قرار واقعی سزاد دی جائے ۔
٭ سرکاری ملازمین کے پے سکیلز 1تا22میں تفاوت غیر متوازن اور ظالمانہ ہے ۔ان سکیلوں کو ختم کر کے 7درجوں میں اس طرح ترتیب دیاجائے کہ غیر متوازن فرق اور ظالمانہ تفاوت دور ہواور کم درجے کے سکیلوں میں کام کرنے والے ملازمین کا گزر بسر بھی باعزت ہو سکے ۔سرکاری ملازمین کی رہائشی کالونیوں میں ریٹائرڈ ہونے پر ملازمین کے بیٹیوں کو پیرنٹس سکیم کے تحت گھر الاٹ کئے جائیں ۔
٭ حکومت فور طور پر سہ فریقی کانفرنس منعقد کر کے مزدور مسائل کے حل کے لئے عملی اقدامات کرے ۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس