Jamaat-e-Islami Pakistan |

اہم خبریں

آئین اور قانون کی بالادستی قبول نہ کرنے کی وجہ سے ادارے لاقانونیت اختیار کرتے ہیں،لیاقت بلوچ



12 جولائی 2020
نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان لیاقت بلوچ نے اپنے بیان میں کہاہے کہ ہر دور میں آئین سے چھیڑ چھاڑ کی گئی ۔ اس وجہ سے وفاق اور صوبوں کے درمیان تناﺅ پیدا ہوتاہے ۔آئین اور قانون کی بالادستی قبول نہ کرنے کی وجہ سے ادارے اور تمام سول محکمے لاقانونیت اختیار کرتے ہیں ۔ وفاق اپنے دائرہ ¿ کار میں محدود رہے اور صوبے اپنی آئینی ذمہ داری پوری کریں ۔ بجلی کی بلاتعطل فراہمی وفاق کی ذمہ داری ہے لیکن کراچی ہی نہیں ، پورے ملک میں عوام غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ کا شکار ہیں ۔ وفاق اپنی یہ ذمہ داری تو پوری کرے ،صوبوں سے حقوق نہ چھینے ۔
لیاقت بلوچ نے کہاکہ ترکی کے صدر طیب اردگان نے ایمانی جذبہ ، حکمت اور ترکی کے اہل ایمان عوام کے جذبوں کی کمال مہارت سے ترجمانی کی ہے ۔ آیا صوفیہ کی اصل حالت جامع مسجد کی بحالی پر ترکی کی اعلیٰ عدلیہ اور قیادت مبارکبادکے مستحق ہیں ۔ ترک مساجد بحال کر رہے ہیں پاکستانی ارطغرل مساجد بند اور گرا رہے ہیں جبکہ مندر تعمیر کرنے میں غرق ہیں ۔ پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق محفوظ ہیں اور ہر قیمت پران کی حفاظت کی جائے لیکن ملک کی غالب اکثریت کے دینی ، مذہبی جذبات کو عدم حکمت سے اشتعال نہ دلایاجائے ۔ پاکستان میں بڑی تعداد میں لوگ آیا صوفیہ جامع مسجد میں 24 جولائی کو نماز جمعہ ادا کرنا چاہتے ہیں ، حکومت پاکستان اس میں سہولت مہیا کرے ۔
دریں اثنا لیاقت بلوچ نے مطالبہ کیا کہ جنگ اور جیو نیوز کے ایڈیٹر انچیف میر شکیل الرحمن کو فوری رہا کیا جائے ۔ بھائی کے بعد ان کی ہمشیرہ کا بھی انتقال ہوگیاہے ۔ ضمانت تو ایسا حق ہے جس میں قانوناً ہر طرح کی گنجائش ہے لیکن حکومت صحافت کی آزادی اور حکومت پر تنقید کے خاتمہ کے لیے ہر آمرانہ اقدام کر رہی ہے ۔ حکومت صحافیوں کا معاشی قتل بند کرے ۔ آزاد صحافت کو سہولتیں مہیا کی جائیں ۔ انہوںنے کہاکہ اقتصادی حالات سے بد حال صحافیوں کی مالی مدد کی جائے ان کے گھروں میں فاقوں کا حکومت احساس کرے ۔
 

Youtube Downloader id

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں




سوشل میڈیا لنکس