Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

اہم خبریں

رائس پالیسی کا فوری اعلان کیا جائے ،شوگر ملوں کی طر ف اربوں روپے کے بقایا جات فوری دلوائے جائیں


 

لاہور 31/ اگست 2019ء: صدر کسان بورڈ پاکستان چوہدری نثار احمد نے بھیرہ ضلع سرگودھا کے مقام پر ملک بھر سے آئے کسان کنونشن کے ہزاروں کسانوں سے خطاب کرتے کہا کہ رائس پالیسی کا فوری اعلان کیا جائے ،شوگر ملوں کی طر ف اربوں روپے کے بقایا جات فوری دلوائے جائیں ،حکومت کی زرعی پالیسی ناکام ہو چکی ہے کھاد،بجلی،تیل کی بڑھتی قیمتیں زرعی معیشت کیلیے تباہ کن ہیں۔ چارٹر آف ڈیمانڈ پر عمل نہ کیا گیا تو احتجاج کریں گے۔کسان کنونشن سے جنرل سیکرٹری چوہدری شوکت چدھڑ،چوہدری ریاض وڑائچ صوبائی صدر،صوبائی سیکرٹری چوہدری صالح محمد رانجھا۔سید وقار حسین،حسنات احمد خان اور دیگر کسان رہنماوں نے بھی خطاب کیا۔کسان بورڈ کے مرکزی صدر چوہدری نثار احمد نے کہا کشمیر ہمارے ملک کی شہ رگ ہے اور ہماری ملکی معیشت میں کشمیر سے نکلنے والے دریاوں کا پانی کلیدی روگ ادا کرتا  ہے۔کسان بورڈ کشمیر کی حفاظت اپنے خون سے کرے  گا ۔انہوں نے کہا کہ حکومت کی زرعی پالیسی ناکام ہو چکی ہے ۔ہم نے حکومت کو چارٹر آف ڈیمانڈ پیش کر دیا ہے اگر حکمرانوں نے ہمارے مطالبات منظور نہ کیے تو زبردست احجاج کریںگے۔ چارٹر آف ڈیمانڈ کے نکات درج ذیل ہیں۔

۔کسان بورڈ کے صدر نے کہا کہ حکومت ( وفاقی اور صوبائی ) کسانوں کو موجود بحران سے نکالنے کے لئے فوری طور پر درج ذیل اقدامات کرے۔1۔شوگر ملزکی طرف گنے کے اربوں کے واجبات دلوائیں جائیں۔2۔حکومت گنے کی قیمت فروخت کا اعلان کرے اور نئی قیمت 250روپے فی من ہونی چاہیے ۔3۔کنو کا ریٹ کم از کم ایک ہزار روپے فی من مقرر کیا جائے۔ -4 اجناس کی امدادی قیمتوں کا اعلان فصل کی بوائی کے وقت کیا جائے ۔5۔زرعی مقاصد کیلیے بجلی پر سب سڈی دی جائے اورمناسب  فلیٹ ریٹ  مقرر کرے ۔6۔ شوگر مل میں گنا وصول ہونے کے ایک ہفتے کے اندر اندر اس گنے کی قیمت کسانوں کو ادا کرنا ضروری قراد دیا جائے اور سی پی آر کو چیک کادجہ دیا جاء..۔7۔کسانوں کو بلاسود قرضے دیے جائیں۔8 ۔ سیلاب زدہ علاقوں کو آفت زدہ قرار دیکرسابقہ قرضے معاف اور آئندہ بلا سود قرضے دیے جائیںا نہوں نے حکمرانوں کو وارننگ دی کہ اگرکسانوں کے مطالبات نہ مانے گئے  تو کسان احتجاج پر مجبور ہونگے۔

 

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں



سوشل میڈیا لنکس