Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

جماعت اسلامی کے تحت یکم ستمبر کو عظیم الشان ”آزادی کشمیر مارچ“ ہوگا ۔حافظ نعیم الرحمن


کراچی /19اگست ( )امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن نے اعلان کیا ہے کہ بھارت کی جانب سے 370اور35Aکے قانون کو ختم کر کے مقبوضہ کشمیر کو اپنا حصہ بنانے کے خلاف اور مظلوم کشمیر یوں سے اظہار یکجہتی کے لیے اتوار یکم ستمبر 3بجے دن شاہراہ فیصل پر تاریخی عظیم الشان ”آزادی کشمیر مارچ“ منعقد کیاجائے گا جس میں بچے،جوان، بوڑھے،خواتین،صحافی،علماء،اساتذہ،ڈاکٹر،انجینئر،وکلاء،طلباء،مزدور،سول سوسائٹی اور ہر طبقہ فکر سے وابستہ افراد شریک ہوں گے،جمعہ 23اور30اگست کو مساجد کے باہر اورمہم کے دوران اہم چوکوں، چوراہوں اور مساجد کے باہر5000مظاہرے اورکارنر میٹنگز منعقد کی جائیں گی اور ریلیاں نکالی جائیں گی،جے آئی یوتھ کے تحت کشمیر کے حوالے سے مختلف مقامات پر تصویری نمائش کا اہتمام کیا جائے،نوجوان ہاتھوں کی زنجیر بناکرکشمیریوں سے اظہار یکجہتی کریں گے، تمام اضلاع کے تحت ”آزادی کشمیر مارچ“ کے حوالے سے علماء کنونشن منعقد کیے جائیں گے۔آزادی مارچ سے 3دن قبل شہر کے اہم مقامات پر دعوتی کیمپ لگائے جائیں گے اورمظلوم کشمیریوں کی حمایت اور آزادی کشمیر مارچ کے حوالے سے بینرز لگائے جائیں گے، ہینڈ بلز تقسیم کیے جائیں گے، فوری طورپر شہر میں موبائل پبلسٹی کا آغاز کیاجائے گا اور اس سلسلے میں فلوٹ گشت کریں گے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے ادارہ نورحق میں ہنگامی پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر نائب امراء کراچی برجیس احمد، ڈاکٹر اسامہ رضی، سکریٹری کراچی عبدا لوہاب، سکریٹری اطلاعات زاہد عسکری اور دیگر بھی موجود تھے۔حافظ نعیم الرحمن نے خطاب کرتے ہوئے مزید کہاکہ علماء سے اپیل کی جائے گی کہ 23اور30اگست کو منبر و محراب سے اپنے خطبات میں کشمیر میں ہونے والے مظالم پر بھارت کی مذمت کریں۔انہوں نے کہاکہ پریس کلب اور کراچی بار ایسوسی ایشن کے تعاون سے کشمیر کے حوالے سے پروگرامات منعقد کیے جائیں گے، ہم پوری دنیا کو ”آزادی کشمیر مارچ“کے ذریعے یہ پیغام دیں گے کہ ”امت مسلمہ کا دھڑکتا ہوا دل،کراچی“اہل کشمیر اور اہل فلسطین کے ساتھ ہے۔انہوں نے کہاکہ  بھارت نے 370اور35Aکے قانون کو ختم کر کے مقبوضہ کشمیر کو اپنا حصہ بناکے شہریوں کو مکمل یرغمال بنالیاہے،مقبوضہ کشمیر کو اس وقت جیل خانہ بنادیا گیا ہے، وہاں کے تعلیمی ادارے اور ہستپال بند کردیے گئے ہیں، چوک، چوراہوں اور گھروں پر فوج کھڑی ہے اورمکمل طور پر کرفیولگادیا گیا ہے،بھارتی درندوں نے ماؤں کے سامنے ان کے بچوں کو ذبح کیا اور ان کی بیٹیوں کی عصمت دری کی لیکن افسوس ہے کہ ساری دنیا اس پر خاموش ہے، بد قسمتی سے پاکستان کے حکمران جتنے بھی آئے سب ہی نے انڈیا سے اچھے تعلقات بنانے کی کوشش کی لیکن بھارت نے کبھی مثبت رویے کا اظہار نہیں کیااور اب ثابت کردیا ہے کہ بھارت کشمیر کو متنازع نہیں سمجھتا اور اس کے نزدیک اقوام متحدہ کی قراردادوں اور عالمی اداروں کی کوئی حیثیت نہیں۔انہوں نے کہاکہ حکمرانوں نے ذہنی طورپر ایل او سی کو قبول کرلیا ہے۔حافظ نعیم الرحمن نے کہاکہ میں سلام پیش کرتاہوں ان شیر دل کشمیریوں کو جنہوں نے بد ترین ریاستی جبر و تشدد کے باوجود آزادی کی تحریک اورجدوجہد کو جاری رکھا ہوا ہے اورایک دن بھی بھارت کی غلامی اور تسلط کو قبول نہیں کیا۔ ہم سلام پیش کرتے ہیں کشمیری ماؤں بہنوں اور بیٹیوں کو جو بھارتی ریاستی دہشت گردی کے خلاف آزادی کی تحریک کے لیے جدوجہد کررہی ہیں، سری نگر میں ماؤں بہنوں پر پیلیٹ گنوں سے فائر کیے جارہے ہیں اس کے باوجود انہوں نے بھارت کی غلامی کو ایک دن کے لیے بھی قبول نہیں کیا۔انہوں نے کہاکہ کشمیری مسلمانوں میں جذبہ حریت موجود ہے کشمیریوں نے مزاحمت کی نئی تاریخ رقم کردی ہے۔ عالمی دنیا کی کشمیر میں ہونے والے مظالم پر خاموشی ٗاور لاتعلقی افسوس ناک ہے،بھارت کی جانب سے عالمی قوانین کو پاؤں تلے روندا جارہا ہے۔یہ کسی زمین کے حصول کی لڑائی نہیں بلکہ حق اور باطل کے درمیان معرکہ ہے،اگر جنوبی سوڈان اور مشرقی تیمور کا معاملہ ہوتا ہے تو عالمی اداروں کی جانب سے مہینوں میں انہیں حق خودارادیت دے کر الگ کردیا جاتا ہے لیکن 70سال سے کشمیریوں کو حق خود ارادیت نہیں دیا گیا۔آج ہمارے حکمران زمینی خداؤں کے سامنے جھکے ہوئے ہیں اور ڈرتے ہیں کہ اگر ہم نے مقبوضہ کشمیر میں اپنی فو ج اتاری تو ہماری معیشت خطرے میں آجائے گی۔حکمران صرف زبانی جمع خرچ کرنے کے بجائے عملی اقدما ت کریں۔مسئلہ کشمیرہمارے ایمان کا حصہ ہے، بھارت نے مکاری سے کشمیر کو بھارت میں شامل کرنے کی کوشش کی ہے، ہم اس فیصلے کو مسترد کرتے ہیں، مقبوضہ کشمیر میں ایک لاکھ سے زائد کشمیری مسلمان نہتے بھارتی فوج سے مقابلہ کررہے ہیں اور یہ پیغام دے رہے ہیں کہ جنگیں ایمان کی قوت سے لڑی جاتی ہے۔

Youtube Downloader id

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں



سوشل میڈیا لنکس