Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

تیل کی قیمتوں میں اضافہ سے زراعت ،تجارت اورصنعت تباہ ہو جائے گی۔ قیمتوں میں اضافہ واپس لیا جائے۔صدر کسان بورڈ


 

لاہور2اگست 2019ء: صدر کسان بورڈ پاکستان چوہدری نثار احمدنے تیل کی بڑھتی قیمتوں پر رد عمل  دیتے کہا ہے کہ تیل کی قیمتوں میں ردوبدل کر کے حکومت نے پچھلے چند ماہ میں اربوں روپے پاکستانیوں اور کسانوں کی جیب سے نکلوا لئے،زراعت تباہ،تجارت تباہ،صنعت تباہ ہو جائے گی۔تیل کی قیمتوں میں اضافہ واپس لیا جائے،

 

، چوہدری نثار احمد نے کہا کہ حکومت ہر ماہ تیل کی مصنوعات کی قیمتوں میں نظر ثانی اور قیمتوں کا رجحان عام آدمی کو ریلیف دینے کے بجائے ان میں اضافہ کیا۔ حکومت نے گزشتہ چند ماہ میں اربوں روپے سے زائد رقم صرف پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کرکے حاصل کی اور اس کا بوجھ عام آدمی  اور کسان پر پڑا۔ حکومت نے کئی دفعہ  پٹرولیم کی مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کیا۔ حکومت اس وقت تک اپنے دورے اقتدار میں لوگوں کے لئے ریلیف فراہم کرنے کی بجائے، قیمتوں میں تبدیلی کے نام پر پٹرولیم مصنوعات میں اضافہ کیا اورگزشتہ روز بھی حکومت نے پیٹرول کی مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا فیصلہ کیا ہے۔ توانائی کے شعبے کو بہتر بنانے کے حکومت کے تمام دعووں کے باوجود، اس شعبے میں بہت کم بہتری آئی ہے اور اس وجہ سے لوڈشیڈنگ اور تیل کی مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے زرعی معیشت اور قومی معیشت کو نقصان پہنچا ہے۔ پٹرولیم مصنوعات میں اضافہ ایک ایسا عنصر ہے جو تمام اشیاء کی قیمتوں میں اضافے اور پیداوار کی لاگت میں اضافے کا بڑا ذریعہ ہے، ٹرانسپورٹ کی قیمتوں میں اضافہ، سبزیوں کی قیمتوں میں اضافہ اور دیگر گھریلوسامان کی قیمتوں میں اضافہ اور عام آدمی کے لئے زندہ رہنا بہت مشکل ہو جاتاہے۔ اپنے تازہ ترین سروے میں پاکستان معیشت واچ نے بتایا کہ پٹرولیم کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے نقصانات جی ڈی پی کا اہم حصہ کھا رہے ہیں اور قومی معیشت خسارے کا شکار ہے۔ جس سے قومی معیشت کو  اربوں سے زائد کا نقصان ہو رہا ہے۔ چوہدری نثار احمد نے کہا کہ اوسط بجلی  اور گیس کی کی وجہ سے قومی معیشت کو نقصان ہو رہا ہے اور پٹرولیم کی قیمتوں میں تبدیلی کی وجہ سے حکومت ہر مہینے کسانوں،صارفین اور مینوفیکچررز کو مزید مسائل میں سے دوچار کر رہی ہے۔ گزشتہ چند ماہ میں حکومت نے زیادہ تر قیمتوں میں اضافہ کیا۔ اور بہت کم مواقع پر لوگوں کو ریلیف فراہم کیا

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں



سوشل میڈیا لنکس