Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

سانحہ بلدیہ کے متاثرین کے معاوضے کی مکمل رقم فی الفور ادا کی جائے ۔نیشنل لیبر فیڈریشن


کراچی ؍12ستمبر 201ء:نیشنل لیبر فیڈریشن نے متنازع این جی او پائیلر کے کردار پر شدید تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے سندھ حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ پائیلر کو محنت کشوں کی نمائندگی دینے کا سلسلہ بند کیا جائے اس کے مالی معاملات سمیت دیگر معاملات کی تحقیقات کی جائے،سانحہ بلدیہ کے متاثرین کے معاوضے کی مکمل رقم فی الفور اوریکمشت ادا کی جائے ۔یہ مطالبات نیشنل لیبر فیڈریشن پاکستان کے ایسوسی ایٹ سکریٹری جنرل خالد خان ،صوبائی صدر سید نظام الدین شاہ اور این ایل ایف کراچی کے صدر عبد السلام نے کراچی پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔این ایل ایف کے رہنماؤں نے کہا کہ سانحہ بلدیہ کی آڑمیں جس طرح متاثرہ خاندان کے ساتھ ناانصافی اورمالی فنڈجمع کیاجارہاہے افسوس یہ ہے کہ حکومت سندھ کی مجرمانہ خاموشی کئی سوالات پیدا کررہی ہے۔11ستمبر کو لیبرڈائریکٹر نے اپنے آفس سے پریس کلب تک سانحہ بلدیہ علی انٹرپرائیزسے اظہاریکجہتی کاپروگرام رکھا۔ فیڈریشنز اوریونینزکوشرکت کی دعوت دی گئی لیکن لیبرڈائریکٹرنے یہ ساراپروگرام پائیلر نامی این ۔جی۔ اوز کے حوالے کردیاجس پر پہلے بھی غیرملکی فنڈنگ اوردیگرمعاملات میں سوالیہ نشان ہے۔ فیڈریشنزاوریونینز دراصل لیبرڈائریکٹر میں محنت کشوں کی نمائندگی کرتی ہیں اورکراچی میں پہلے ہی این ۔جی ۔اوز نے ٹریڈ یونین کو بہت نقصان پہنچا یا۔ ہم محسوس کرتے ہیں کہ پائیلر نامی این ۔جی۔ او ز کوجس طریقے سے ہرمعاملات میں سرکاری نمائندگی دی جارہی ہے اس سے کراچی کی ٹریڈیونینز کو شدید خطرات لاحق ہیں۔لیبرڈایکٹریٹ کے سانحہ بلدیہ کا پروگرام کراچی پریس کلب میں کیاگیا اس میں غیرملکی افرادکو اس این ۔جی۔ او نے اپنے ذاتی مفادات کے خاطر نمائندگی دی گئی اورحقیقی مزدورنمائدوں کو نظراندز کیاگیا ۔نیشنل لیبرفیڈریشن پاکستان نہ صرف صوبہ سندھ بلکہ پورے پاکستان کی سب سے زیادہ یونینز کی نمائندگی کرنے والی فیڈریشن ہے ۔ہمارے پائیلر کے بارے میں شدید تحفظات ہیں ہم مطالبہ کرتے ہے کہ فوری طورپر حکومت سندھ پائیلر کی سرکاری تقریبات اورمحنت کشوں کے پروگرامات میں اس این ۔جی۔ اوز کی نمائندگی ختم کریں ۔ہم حکومت پاکستان اورسندھ حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ پائیلر کے غیرملکی ملنے والی امدد اوران کے اکاؤنٹ کی تحقیقات کی جائے ۔
سانحہ بلدیہ علی انٹرپرایز کے متاثرین کو جر من سے ملنے والے 60 کروڑ روپے جو پائیلر کی پالیسی کے تحت 6 ہزارروپے متاثرین کو دیے جارہے ہیں اوراس کے سود کی رقم سے فائدہ حاصل کیا جارہاہے ۔ متاثرین کے مطالبے کو مدنظررکھتے ہوئے فی متاثریکمشت ادائیگی کی جائے۔ اگرحکومت نے ان معاملات پرتوجہ نہ دی تو ہم احتجاج کاحق رکھتے ہیں اوراس کے خلاف پورے سندھ میں بھرپوراحتجاج کیاجائے گا۔#

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں

سوشل میڈیا لنکس