Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

ہماری تہذیب و معاشرت کی تاریں اردو زبان سے جڑی ہیں۔ دردانہ صدیقی


کراچی ؍07 ستمبر2018ء: زبان معاشرے کی بقا کے لیے وہ خون ہے جس کے بغیر زندگی کی سانسیں سکڑ جاتی ہیں۔ اردو ہماری قومی زبان ہے، ہماری تہذیب اور معاشرت کی تاریں اردو زبان سے جڑی ہوئی ہیں۔ ان خیالات کا اظہار جماعت اسلامی حلقہ خواتین؂کی جنرل سیکریٹری دردانہ صدیقی نے 8 ستمبر کو منائے جانے والے ’’یوم نفاذ اردو‘‘ کے حوالے سے اپنے ایک بیان میں کیا۔انہوں نے کہا کہ 8 ستمبر 2015 میں سپریم کورٹ کے فیصلے کے مطابق جسٹس جواد ایس خواجہ نے تمام سرکاری اداروں اور ارباب اختیار کو حکم دیا تھا کہ اردو زبان کو تین ماہ کے اندر سرکاری اداروں میں نافذ العمل کیا جائے لیکن تین سال کا عرصہ گزرنے کے باوجود اس حکم کی تکمیل نہ ہو سکی۔ انہوں نے مزید کہا کہ زبان تہذیب کا وہ حصہ ہے جو انسانی معاشرے کی بنیاد ہے پاکستانی معاشرہ میں قومی زبان کی گرتی ہوئی ساکھ کو سنبھالنا اور اسکی اہمیت کو منوانا وقت کی اہم ترین ضرورت ہے بالخصوص نوجوان نسل میں اس حوالے سے احساس برتری پیدا کرنے کے لیے معاشرہ میں موجود تمام ذمہ دار عناصر ،تعلیمی اداروں ، نصاب و نظامت تعلیم، ذرائع ابلاغ ، قلمکاروں اور والدین کو اپنا بھرپور کردار ادا کرنا ہوگا۔ اسی حوالے سے 8 ستمبر 2018 بروز ہفتہ ’’یوم نفاذ اردو‘‘ کے طور پر منایا جارہا ہے۔ دردانہ صدیقی نے مزید کہا کہ ضرورت اس امر کی ہے کہ پاکستان کے آئینی ادارے کے حکم کی فوری تعمیل کرتے ہوئے تمام اداروں میں اردو کوبحیثیت سرکاری زبان نافذ کیا جائے کیونکہ اسی میں پاکستان کی تہذیب کی بقا، فروغ اور تحفظ پوشیدہ ہے۔ جماعت اسلامی حلقہ خواتین کے تحت 8 ستمبر یوم نفاذ اردو کے موقع پر سے سیمینارز، فورمز اور مظاہروں کا انعقادکیا جائے گا، نفاذ اردو کی ضرورت و اہمیت پر مضامین شائع کروائے جائیں گے اور سوشل میڈیا پر آگہی مہم چلائی جائے گی۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں

سوشل میڈیا لنکس