Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

عمران خان لٹیری شوگر ملوں سے کسانوں کے اربوں روپے واجبات دلوائیں۔چوہدری نثاراحمد


لاہور7 اگست2018ء:صدرکسان بورڈ پاکستان چوہدری نثار احمد نے آئندہ  نئی حکومت سیزرعی پالیسیوں میں انقلابی تبدیلوں  کا مطالبہ کر دیا ۔۔ اپنے دفتر میں موجود میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے انہوں نے کہا کہ  لٹیری شوگر ملوں نے عدالت عالیہ کے احکامات کے باوجود کسانوں کو 180 فی من دینے سے انکار کردیا ہے  اور سابقہ حکمرانوں کی غلام انتظامیہ بھی ان احکامات پر عمل درآمد نہیں کروا رہی ۔شوگر ملیں قیمت میں کٹوتیاں کرکے اپنے چہیتے مڈل مینوں کے ذریعے مجبور کسانوں کو روزانہ کروڑوں کا ٹیکہ لگا رہی ہیں ۔سابقہ سیزنوں کے اربوں روپے کے واجبات بھی شوگر ملوں نے دبا رکھے ہیں ۔کسان کنگال ہوچکے ہیں اور زراعت گھاٹے کا سودا بن چکی ہے ۔زراعت ملکی معیشت کی ریڑھ کی ہڈی ہے  اور اگر زراعت نہ رہی تو پھر ملک پر قحط سالی کا رج ہو گا اس لیے ہم تبدیلی کا اور انصاف کا نعرہ لگانے والے عمران خاں سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اپنی پہلی تقریر میں کسانوں کے مطالبات  مان کر زرعی معیشت کی بہتری کے ہنگامی اقدا مات کریں۔ لوڈ شیڈنگ اور بجلی کے ریٹوں میں بلا جواز بے پناہ اضافہ سے ہزاروں ٹیوب ویل بند پڑے ہوئے ہیں ۔ زراعت کے لئے پانی کی عدم دستیابی سے زراعت قریب المرگ ہے۔ لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ کم کیاجائے ، نا جائز بل بند کئے جائیں ۔ اور بجلی کے ریٹ کم کئے جائیں ۔سابقہ حکمرانوں کی کسان کش پالیسیوں کی وجہ سے پیداوار میں کمی ہو چکی ہے۔چاول،کپاس اور گندم کے سرکاری ٹارگٹ پورے نہیں ہوسکے ۔شوگر ملوں،کاٹن ملوں،رائس ملوں اور مڈل مینوں نے کسانوں کے اربوں روپے ہڑپ کر رکھے ہیں۔نئی حکومت کے ذمہ دار سب سڈی بحال کرکے زراعت کو منافع بخش بنائیں ۔ہم حکمرانوں سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ  جائز مطالبات منظور کرنے کیلیے قانون سازی کریں۔     (1) شوگر ملوں کی سی پی آر کو چیک کا درجہ دیا جائے(2)   زرعی مداخل پر جی ایس ٹی ختم کیا جائے(3) کھاد کی ہر بوری پر قیمت درج کیا جائے(4)ٹیوب ویلوں کیلیے مناسب فلیٹ ریٹ مقرر کرکے زراعت کیلیے بجلی کی قیمت کم کی جائے 5۔زرعی اجناس کی امدادی قیمتوں کو یقینی بنایا جائے ۔اس سلسلے میں ملک بھر کے ضلعی ،مقامی عہدیداراں کو خصوصی ٹاسک دیا گیا ہے کہ وہ کسانوں کے ہمراہ اپنے اپنے حلقہ کے ممبران قومی و صوبائی اسمبلی سے وفود کے ہمراہ ملاقاتیں کر کے انہیںآئندہ حکمرانوں سے کسانوں کے جائز مطالبات منظور کرانے پر زور دیں۔اور تبدیلی اور انصاف کا نعرہ لگا کر حکمران بننے والوں سے زرعی پالیسی میں انقلابی تبدیلی لانے پر زور دیں ۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں

سوشل میڈیا لنکس