Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

ڈاکٹر سید وسیم اخترکی پبلک اکاونٹس کمیٹی کی صدارت کے دوران محکمہ صحت کے سیکرٹریز کواہم ہدایات


لاہور12 اپریل 2018ء:پنجاب اسمبلی میں جماعت اسلامی کے پارلیمانی لیڈرڈاکٹر سید وسیم اخترنے کہا ہے کہ ایسے ڈاکٹرز جو نان پریکٹس الاؤنس لیتے ہیں اور اپنے گھر یا باہر پریکٹس نہیں کرتے ان ڈاکٹرز کو پرائیویٹ مریضوں کی آ مدنی میں سے شیئر منی دی جائے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے پبلک اکاونٹس کمیٹی ون کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ اجلاس میں محکمہ صحت کی آڈٹ رپورٹ پربحث کے دوران ڈاکٹرسید وسیم اختر نے محکمہ صحت کے اعتراض کو مسترد کرتے ہوئے بطور کمیٹی چیئر مین فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ پرائیویٹ مریضوں کے علاج معالجہ میں جو ہسپتال کوآمدنی ہوتی ہے اس میں نرسزپیرامیڈیکل سٹاف کیساتھ ساتھ ڈاکٹرز کو بھی شیئر منی ملنی چاہیے اور یہ ان ڈاکٹرز کاحق ہے جو پرائیویٹ پریکٹس نہیں کرتے۔ انہوں نے محکمہ صحت کے سیکرٹریز کو ہدایت کی کہ وہ تمام ہیلتھ اداروں کو نوٹی فائی کریں اور پنجاب کے کسی بھی صحت کے ادارہ میں آئندہ اس طرح کاآڈٹ پیرا نہ بنایا جائے۔ اجلاس میں ایک اور آڈٹ پیرا کے جواب میں ڈاکٹر سید وسیم اختر نے کہا کہ ماضی میں اس طرح کی پریکٹس کی گئی تھی کہ ہسپتالوں کے اندر قائم فارمیسیوں پر ہسپتالوں کی سرکاری ادویات سمیت غیر میعاری ادویات فروخت کی جاتی تھیں۔ انہوں نے محکمہ صحت کوہدایت کی کہ وہ تین سال کی سالانہ مانیٹرنگ رپورٹ کمیٹی کو جمع کرائیں اورپنجاب کے تمام ہسپتالوں کو ہدایت کریں کہ وہ ہسپتالوں کے اندر فارمیسیاں نہ کھلنے دیں۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس