Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

اہم خبریں

سینیٹ انتخابات میں ارکان کی خرید و فروخت پر الیکشن کمیشن سخت ترین کاروائی کرے ۔ملی یکجہتی کونسل


لاہور06مارچ 2018ء:ملی یکجہتی کونسل کی مجلس عاملہ کا اجلاس صاحبزادہ ابوالخیر ڈاکٹر محمد زبیر کی صدارت میں منصورہ میں ہوا جس میں ملی یکجہتی کونسل میں شامل سولہ جماعتوں کے رہنماﺅں نے شرکت کی ۔ اجلاس کے بعد صدر ملی یکجہتی کونسل پاکستان صاحبزداہ ابوالخیر ڈاکٹر محمد زبیر اور سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ نے سید ضیاءاللہ شاہ ، یعقوب شیخ ، علامہ نیاز حسین نقوی ، پروفیسر محمد ابراہیم ، علامہ ثاقب اکبر ، اسد اللہ بھٹو ، آصف لقمان قاضی ، نذیر احمد جنجوعہ ، حافظ عبدالرزاق روپڑی ، مولانا اللہ وسایا ، خواجہ معین الدین محبوب کوریجہ ، علامہ عارف واحدی ، مولانا عبدالمالک ، پیر معصوم حسین شاہ نقوی ، پیر غلام رسول اویسی ، پیر سید لطیف الرحمن شاہ اور دیگر رہنماﺅں کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ سینیٹ انتخابات میں ارکان کی خرید و فروخت پر الیکشن کمیشن سخت ترین کاروائی کرے تاکہ انتخابی عمل کو دولت کی ریل پیل سے بچایا جاسکے ۔ 

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے سیکرٹری جنرل ملی یکجہتی کونسل و جماعت اسلامی پاکستان لیاقت بلوچ نے کہاکہ 2018 ءکے انتخابات سر پر ہیں سینیٹ انتخابات میں ارکان اسمبلی کی خرید و فروخت اور دولت کے عمل دخل نے بہت سے سوالات پیدا کردیے ہیں ۔ ارکان اسمبلی کو بھیڑ بکریوں کی طرح خریدے جانے پر عوام کاروائی کا مطالبہ کر رہے ہیں اگر الیکشن کمیشن اس سنگین صورتحال پر بھی کوئی قدم نہیں اٹھاتا اور بکاﺅ مال اور خریداروں کے خلاف کوئی کاروائی نہیں کرتا تو عوام سمجھیں گے کہ یہ سب الیکشن کمیشن کی مرضی سے ہورہاہے ۔ ایک سوال کے جواب میں لیاقت بلوچ نے کہاکہ ملک کی خارجہ پالیسی ناکام ہے حکمران قومی مفادات کے تحفظ کے لیے کوئی قدم نہیں اٹھا رہے اور حکمرانوں کی نااہلی کی وجہ سے پاکستان کو دہشتگردی کی سرپرستی کرنے والے ممالک کی گرے لسٹ میں دھکیل دیا گیاہے ۔انہوںنے کہاکہ چار سال تک وزیر خارجہ مقرر نہیں کیا گیا اور اب جسے مقرر کیا گیاہے ، وہ بھی غیر سنجیدہ بیانات سے سیاسی اختلافات میں شدت پیدا کررہے ہیں ۔انہوںنے کہاکہ آج حکمران امریکی احکامات پر جماعة الدعوہ پر پابندی لگا کر ایف آئی اےف کے اثاثوں اور اداروں پر قبضہ کر رہے ہیں اور کل کوئی اور حکم آ جائے گا ۔ لیاقت بلوچ نے شام کی صورتحال پر ایک سوال کے جواب میں کہاکہ پاکستا ن ، ترکی ، ایران اور سعودی عرب کے ساتھ مل کر شام، یمن فلسطین کشمیر اور برما سمیت جہاں بھی مسلمان ظلم و زیادتی کا شکار ہیں ان کے مسائل حل کرے ۔ خصوصاً شام میں فوری جنگ بندی کے لیے کوشش کی جائے ۔ ملی یکجہتی کونسل 26 مارچ کو بادشاہی مسجد میں عظیم الشان اتحاد امت کانفرنس منعقد کرے گی اور دس مارچ کو لاہور میں ہی تحفظ ختم نبوت کانفرنس منعقد کی جائے گی ۔ اتحاد امت کے عنوان سے اسلام آباد ، کراچی ، پشاور ، کوئٹہ ، گلگت بلتستان، مظفر آباد سمیت ملک کے بڑے بڑے شہروں میں کانفرنسیں منعقد کی جائیں گی ۔ قبل ازیں ملی یکجہتی کونسل کے اجلاس میں درج ذیل عنوانات پر قرار دادیں پاس کی گئیں : ۔

1۔ ملی یکجہتی کونسل پاکستان کا یہ اجلاس اس امر کا اعادہ کرتا ہے کہ پاکستان نے دنیا کو محفوظ بنانے اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں کسی بھی دوسرے ملک سے زیادہ قربانیاں دی ہیں۔اس جنگ کے نتیجہ میں پاکستان کو ہزاروں سو ئلین اور فوجی جانوں کا نقصان برادشت کرنا پڑا ہے جبکہ پاکستان کی معیشت کو بھی بے پناہ نقصان پہنچاہے ۔لیکن عالمی طاقتیں خصوصاََ امریکہ اور برطانیہ کی طرف سے نہ صرف ان قربانیوں سے صرف نظرکی پالیسی اپنائی جا رہی ہے اور فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (FATF) کے تحت پاکستان پر بے جا پابندیوں کی بھی سازش تیار کی جا رہی ہے ۔جس کی یہ اجلاس واضح الفاظ میں مذمت کرتا ہے ۔

2۔ ملی یکجہتی کونسل کا اجلاس امریکہ کی طرف سے اسرائیل کے دارالحکومت کو بیت القدس منتقل کرنے کے اعلان کی ایک مرتبہ پھر مذمت کرتا ہے اور اس مطالبہ کا اعادہ کرتا ہے کہ امریکہ اس حوالے سے مسلمانوں اور عالمی ممالک کے جذبات کا احترام کرے اور اپنا اعلان واپس لے۔

3۔ ملی یکجہتی کونسل کا اجلاس حالیہ پٹرولیم مصنوعات میں اضافہ کی واپسی کا بھی مطالبہ کرتا ہے کیونکہ پٹرولیم کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ سے مہنگائی کی شرح میں بے پناہ اضافہ ہو گیا ہے جس کے نتیجہ میں عام آدمی کی زندگی اجیرن ہو گئی ہے ۔اجلاس حکومت سے مطالبہ کرتا ہے کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں شامل تمام ناروا ٹیکس فی الفور واپس لے ۔

4۔ ملی یکجہتی کونسل کا آج کا اجلاس عقیدہ ختم نبوتﷺ کے تحفظ کا بھرپور اعادہ کرتا ہے اور اس عزم کا ایک بار پھر اظہار کرتا ہے کہ عقیدہ ختم نبوت ﷺ ، آئین میں موجود اسلامی قوانین اور اسلامی تہذیب و تمدن کے خلاف ہر سازش کو ناکام بنانے کے لیے اپنی بھرپور کوششیں جاری رکھے گا۔ ملی یکجہتی کونسل ان قوانین میں ترمیم کی خبروں پر تشویش کا اظہار کرتی ہے اور حکومت کو متنبہ کرتی ہے کہ وہ ان قوانین کو غیر موثر بنانے کی کوشش نہ کرے اور اگر اس قسم کی کوئی سازش کی گئی تو کونسل اس سازش کو ناکام بنانے کے لیے کسی بھی اقدام سے گریز نہیں کرے گی۔

5۔ ملی یکجہتی کونسل کا اجلاس جماعت الدعوة ، فلاح انسانیت فاﺅنڈیشن پر پابندی اور اثاثہ جات پر قبضہ کی مذمت کرتاہے اور مطالبہ کرتا ہے کہ یہ غیر قانونی پابندیاں فی الفور ختم کی جائیں اور اثاثہ جات واگذار کیے جائیں۔

6۔ آزاد کشمیر اسمبلی نے عقیدہ ختم نبوت ﷺ کے تحفظ کے لیے جو قانون منظور کیا ہے ملی یکجہتی کونسل اس کی تحسین کرتی ہے اور اس ضمن میں آزاد کشمیر کے صدر ، وزیر اعظم اور سپیکر کو مبارکباد پیش کرتی ہے۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں

سوشل میڈیا لنکس