Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

اہم خبریں

امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق کا سینیٹرز کے وفد کے ہمراہ لائن آف کنٹرول کا دورہ


لاہور27فروری 2018ء:  امیرجماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق ،سینیٹرزکے وفد کو لے کر سیز فائر لائن پر پہنچ گے اوراگلے مورچوں پر پاک فوج کے جوانوں کی حوصلہ افزائی ،شہداءکے لواحقین سے ملاقاتیں اور زخمیوں کی عیادت کی ۔

  اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر کے اندر آزادی کے لیے برسرپیکار کشمیری خود کو تنہا نہ سمجھیں پاکستان کے 20کروڑ عوام ان کے پشت پر ہیں ،نریندر مودی کے ہاتھ مسلمانوں کے خون سے رنگین ہیں وہ مستند دہشت گرد ہے ،کشمیریوں کی آزادی کی منزل قریب ہے ۔سیز فائر لائن کے متاثرین کی استقامت جرات اور بہادری کو سلام کرنے آیا ہوں ،شہداءکے لواحقین کے لیے سہولیات فراہم کرنا حکومت کا فرض ہے ،یہاں بہنے والا خون ہمارا خون ہے یہاں کے لوگوں اور افواج پاکستان کی وجہ سے پاکستانی قوم سکون کی نیند سوتی ہے ،ملک کی نظریاتی سرحدوں کی حفاظت کرنے والے پاک فوج کے جوان بلند حوصلہ ہیں ضرورت پڑنے پر پوری قوم پاک فوج کے شانہ بشانہ لڑے گی۔انہوں نے کہا کہ کشمیر کی آزادی ہندوستان کے نقشے کو تبدیل کر دے گی ،ہندوستان اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق کشمیریوں کو ان کا پیدائشی اور بنیاد ی حق فراہم کرے ،عالمی برادری بھارتی جارحیت اور قتل عام کا نوٹس لے،نریندر مودی اسرائیل سے مل کر پاکستان کے خلاف سازشیں کررہا ہے اسرائیلی فوجی کشمیر میں لڑرہے ہیں اور بھارتی فوجی فلسطین میں مسلمانوں کا قتل عام کررہے ہیں ۔

سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ نریندر مودی کو یہ پیغام دینا چاہتا ہوں کہ وہ کشمیریوں کا قتل عام بند کر کے اپنی قیادت کے عہد کے مطابق کشمیریوں کو حق خود ارادیت دے ،اگر بھارت نے پاکستان کے خلاف جارحیت کی تو پاکستانی قوم اس کا ایسا جواب دے گی کہ مودی کو ہندوستان کا موجودہ نقشہ نہیں ملے گا ۔ انہوں نے کہاکہ جماعت اسلامی مسئلہ کشمیر کوترجیح اول سمجھتی ہے یہ نظریاتی جنگ ہے پاکستان صوبوں کا نام نہیں بلکہ نظریے کا نام ہے۔ انہوں نے کہاکہ آزادکشمیر کے عوام کے مسائل حل کرنا مرکزی حکومت کی ذمہ داری ہے جماعت اسلامی نے اپنی سطح پر مسائل حل کرنے کی کوشش کی ہے اور حکومت کو بھی اس طرف متوجہ کیا ہے سی پیک کا منصوبہ ہزارہ سے ہوتا ہوا پنجاب کی طرف جار ہا تھا میری تحریک پر آزادکشمیر کو بھی اس میں شامل کیا گیا ،انہوں نے کہا کہ آزادکشمیر کو ماڈل اسلامی ریاست بنایا جائے تاکہ یہاں کے عوام مستفید ہونے کے ساتھ ساتھ مقبوضہ کشمیر کے بھائیوں کے لیے باعث تقلید ہو ،انہوں نے کہاکہ حکومت پاکستان کشمیریوں کو منگلا ڈیم سمیت دیگر ہائیڈل پراجیکٹس پر خالص منافع فراہم کرے تا کہ آزاد خطہ خود کفالت کی طر ف پیش قدمی کر سکے انہوں نے کہا کہ ہندوستان سازش کے تحت پاکستان کی طرف بہنے والے دریاﺅں پر ڈیمز تعمیر کر کے پانی روکنا چاہتا ہے اور پاکستان کو بنجر صحرا میں تبدیل کرنا چاہتا ہے ہندوستان کی ان چالوں کا بھی مقابلہ کرنا ہو گا ہندوستان پاکستان بھی دہشت گردی کروا کر یہاں عدم استحکام پیدا کررہا ہے حکومت پاکستان عالمی سطح پر آواز بلند کر کے ہندوستان کو بے نقاب کرے ،انہوں نے کہاکہ کشمیریوں نے اپنے حصے کا کام کردیا ہے اب اس تحریک کو منزل تک پہنچانے کے لیے مرکزی حکومت ٹھوس پالیسی اور جامع حکمت عملی تشکیل دے کشمیر پر ایسی پالیسی تشکیل دی جائی جو مستقل ہو حکومت جو بھی ہو وہ اسی پالیسی کو لے کر چلے مسئلہ کشمیر کو عالمی سطح پر اجاگر کرنے کے لیے ایک مستقل نائب وزیر خارجہ کا تقررکیا جائے مسئلہ کشمیر کو عالمی سطح پر اجاگر کرنے کے لیے اہم ممالک کے دارالحکومتوں کے دورے کیے جائیں پاکستانی سفارت خانوں میں کشمیر ڈیسک قائم کیا جائے ۔

جماعت اسلامی راولاکوٹ کی طرف سے سینیٹرسراج الحق اور ان کے وفد کے اعزاز میں استقبالیہ دیا گیا جس سے امیر جماعت اسلامی آزاد کشمیر ڈاکٹر خالد محمود سمیت دیگر قائدین نے خطاب کیا ،تقریب سے خطاب کرتے ہوئے امیر جماعت اسلامی آزادکشمیر ڈاکٹر خالد محمود نےخطاب کرتے ہوئے وفد کا شکریہ ادا کیا۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں

سوشل میڈیا لنکس