Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

نئی نسل کو جنسی تعلیم کی نہیں دلوں میں خوف خدا پید ا کرنے والی دینی تعلیم کی ضرورت ہے۔راشدنسیم


لاہور2فروری 2018ء:   نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان راشد نسیم نے کہا ہے کہ امریکہ میں پچھلے سو سال اوربرطانیہ میں تیس سال سے بچوں کو جنسی تعلیم دی جارہی ہے مگر جنسی جرائم میں کمی آنے کی بجائے مسلسل اضافہ ہورہا ہے اورمغرب اور یورپی ممالک میں بن بیاہی ماﺅں کی تعداد لاکھوں میں ہے جبکہ لاکھوں لوگوں کو پتہ ہی نہیں کے ان کے باپ کا کیا نام ہے ،جرائم صرف نفاذ شریعت اور خوف خدا سے روکے جاسکتے ہیں ،نئی نسل کو جنسی تعلیم کی نہیں دلوں میں خوف خدا پید ا کرنے والی دینی تعلیم کی ضرورت ہے ،حکمران جنسی جرائم روکنے کی آڑ میں مغربی ایجنڈے کی تکمیل چاہتے ہیں ،ریاست ،پولیس اور عدالتی نظام زیادتی اور قتل کے بڑھتے ہوئے واقعات پر قابو پانے میں مکمل طور پر ناکام ہوچکے ہیں ،ایک واقعہ کے مجرم پکڑے نہیں جاتے اتنی دیر میں کوئی دوسرا واقعہ ہوجاتا ہے، معصوم بچوں اور بچیوں کو درندگی سے بچانے کیلئے شریعت نے جو سزائیں مقرر کی ہیں ان پر عمل کرنا ہوگا۔۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے منصورہ میں جاری مرکزی تربیت گاہ کے شرکاءسے خطاب کیا۔

                راشد نسیم نے کہا کہ ملک میں بچوں کے ساتھ زیادتی،اغواءاور قتل کے جرائم دن بدن بڑھتے جارہے ہیں مگر پولیس اور سیکیورٹی ادارے ان جرائم اور درندہ صفت مجرموں کے سامنے بے بس نظرا ٓتے ہیں،معصوم بچیوں کی لاشیں کوڑے کے ڈھیروں پر پھینک دی جاتی ہیں روانہ قوم کو نئے سے نئے زخم سہنا پڑتے ہیں ،لیکن حکمران ٹس سے مس نہیں ہوتے ،انہوں نے کہا کہ حکمران عوام کو جان مال اور عزت کا تحفظ دینے میں بری طرح ناکام ہوچکے ہیں اور حقیقت یہ ہے کہ ان حکمرانوں کے اندر سرے یہ صلاحیت ہی موجود نہیں کہ وہ لوگوں کا تحفظ کرسکیں ،جو حکمران خود پولیس اور سیکیورٹی ایجنسیوں کے کڑے پہرے میں باہر نکلنے سے گھبراتے ہوں وہ عوام کی حفاظت کیسے کرسکتے ہیں،انہوں نے کہا کہ عام آدمی کو جان ،مال اور عزت کا تحفظ صرف شریعت کا نظام دے سکتا ہے ،اگر چند قاتلوں کو پھانسیوں پر لٹکادیا جائے اور ڈاکوﺅں اور چور وں کے ہاتھ قلم کردیئے جائیں تو سالوں یا مہینوں نہیں چند ہفتوں میں جرائم کا قلع قمع ہوجائے گااور کسی بدمعاش کو کسی کی بہن بیٹی کی طرف آنکھ اٹھا کر دیکھنے اور کسی کو مالی نقصان پہنچانے کی جرا


¿ت نہیں ہوگی۔انہوں نے کہا پاکستانی معاشرہ قرآن و سنت سے متصادم کسی قانون کو برداشت نہیں کرسکتا،حکمرانوں کیلئے بہتر یہی ہے کہ اللہ کی نافرمانیوں کا راستہ چھوڑ کر فرمانبرداری اور اطاعت کا رویہ اپنائیں تاکہ معاشرے کو مزید زوال اور پستی سے بچایا جاسکے ۔ 

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس