Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

ایم ایم اے کے قیام کا اصل مقصد دینی جماعتوں کو ظلم و جبر کے نظام کے خلاف متحد کرنا ہے۔سراج الحق


لاہور11جنوری2018ء:امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹرسر اج الحق نے کہاہے کہ ایم ایم اے کے قیام کا اصل مقصد دینی جماعتوں کو ظلم و جبر کے نظام کے خلاف متحد کرنا اور ملک میں سیکولر و لبرل ازم کے خواب دیکھنے والوں کا راستہ روک کر نظام مصطفی کے نفاذ کی جدوجہد کرنا ہے ۔ پاکستان کو اس کے نظریاتی تشخص سے محروم کرنے والے ملک و قوم کے خیر خواہ نہیں ۔ عالمی سامراجی قوتوں کے غلام اور عالمی اسٹیبلشمنٹ کے آلہ کار حکمرانوں نے پاکستان کو پوری دنیا میں بدنام کیا ۔ آج کا دجال ٹرمپ مسلمانوں کو للکا ررہاہے ۔ عالم اسلام کو متحد ہو کر اس کا مقابلہ کرناہوگا ۔ پاکستان میں دینی قوتوں کو باہم دست و گریبان کرنے والوں نے محض اپنے اقتدار کے لیے قوم کے اتحاد کو پارہ پارہ کیا ۔ علاقائی ، لسانی اور فرقہ وارانہ تعصبات کو ختم کرنے کے لیے منبر و محراب سے آواز اٹھانے کی ضرورت ہے ۔ جب تک حکمران اپنی ذات کے حصار سے نکل کر ملک و قوم کے مفاد کو سامنے نہیں رکھیں گے ، قصور جیسے اندوہناک سانحات رونما ہوتے رہیں گے ۔ان خیالات کااظہار انہوںنے جمعیت اتحاد العلما لاہور کے زیراہتمام الحمرا ہال میں اتحاد امت علما کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ کنونشن سے نائب امیر جماعت اسلامی پاکستان ڈاکٹر فرید احمد پراچہ ، ڈائریکٹر امور خارجہ جماعت اسلامی عبدالغفار عزیز ، صدر جمعیت اتحاد العلما پاکستان شیخ القرآن مولانا عبدالمالک اور امیر جماعت اسلامی لاہور ذکر اللہ مجاہد نے بھی خطاب کیا ۔ کنونشن میں مختلف مکاتب فکر کے علمائے کرام نے بڑی تعداد میں شرکت کی ۔ 

سینیٹر سرا ج الحق نے کہاکہ قوم کو اس وقت باکردار ، دیانتدار اور جرا ¿ت مند قیادت کی ضرورت ہے جو صرف علمائے کرام دے سکتے ہیں ۔ قوم کی رہنمائی کا فریضہ علمائے کرام ادا کر رہے ہیں ۔ ستر سال سے ملک پر جس ظلم و جبر کے نظام کا راج ہے اس نے عام آدمی کو پریشانیوں اور مصیبتوں میں مبتلا کر رکھاہے ۔ یہی ظالمانہ نظام عوام کی خوشیوں کا قاتل ہے ۔ انہوںنے کہاکہ ستر سال میں تقریباً آدھے عرصے تک حکومت کرنے والی نام نہاد سیاسی جماعتوں نے عوام کے ساتھ کیا گیا کوئی ایک وعدہ بھی پورا نہیں کیا ۔ ملک کو اللہ تعالیٰ نے بے پناہ وسائل سے نوازا مگر اقتدار پر قابض ظالم اشرافیہ تمام وسائل پر خود قابض ہے اور عوام غربت ، مہنگائی ، بے روزگاری اور بدامنی کے ہاتھوں تنگ آ کر خود کشیوں پر مجبور ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ بڑے بڑے لٹیروں نے مختلف سیاسی جماعتوں میں پناہ لے رکھی ہے وہ اپنے جرائم کو چھپانے کے لیے سیاست کرتے ہیں ۔ جاگیردار، وڈیرے اور سرمایہ دار اپنی دولت کے بل بوتے پر پورے انتخابی نظام کو یرغمال بناتے ہیں اور کروڑوں اربوں خرچ کر کے اسمبلیوں میں پہنچتے ہیں اور پھر عوام کے ٹیکسوں سے جمع ہونے والی قومی دولت لوٹ کر بیرونی بنکوں میں منتقل کر دیتے ہیں ۔انہوںنے کہاکہ پانامہ ، دبئی اور لندن لیکس میں اور قرضے لے کر ہڑپ کرنے والوں کی فہرستوں میں کسی ایک عالم دین کا نام نہیں آیا ۔ علمائے کرام متحد ہو کر قوم کی ڈوبتی ناﺅ کو کنارے لگاسکتے ہیں ا س لیے اب انہیں معمولی معمولی مسلکی اختلافات سے بالاتر ہو کر ملک و قوم کے بارے میں سوچنا ہوگا ۔ انہوںنے کہاکہ ایم ایم اے ملک کی سب دینی جماعتوں کو ساتھ ملا کر آئندہ انتخابات میں کرپٹ اور بد دیانت لوگوں کا راستہ روکنا چاہتی ہے ۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس