Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

اہم خبریں

دہشتگردی کے واقعات کا تسلسل کے ساتھ ہونا انتہائی افسوس ناک اور قابل مذمت ہے


لاہور    2دسمبر2017ء: امیر جماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمد نے پشاور زرعی یونیورسٹی کے قریب دہشتگردی کے واقعے پر اپنے شدید ردعمل کا اظہارکرتے ہوئے کہاہے کہ کوئٹہ اور پشاور میں گزشتہ چند روز سے دہشتگردی کے واقعات کا تسلسل کے ساتھ ہونا انتہائی افسوس ناک اور قابل مذمت ہے۔انہوں نے کہاکہ آئی ایس پی آر کے ترجمان نے بھی بتایاہے کہ پشاور کے حملے میں دہشت گرد افغانستان سے آئے مگر قانون نافذ کرنے والے اداروں کے لیے سوالیہ نشان یہ ہے کہ افغانستان سے پشاور تک کافی چیک پوسٹیں موجود ہیں مگر اس کے باوجود دہشتگردکس طرح پشاور پہنچ گئے؟۔انہوں نے کہاکہ امریکہ کی سرپرستی میں بھارت افغانستان میں بیٹھ کر پاکستان میں دہشت گردی کررہا ہے۔اگر پاکستان میں دہشت گردی کو روکنا ہے تو ہمیں نام نہاد امریکی جنگ سے باہر نکلنا ہوگا۔جب سے پاکستان نام نہاد امریکی جنگ کا حصہ بنا ہے ملک کا کوئی بھی کونہ محفوظ نہیں رہا۔اس جنگ نے ہماری معیشت کو تباہی کے دھانے پر لاکھڑا کیاہے۔اب تک 50ہزا ر سے زائد قیمتی جانیں ضائع ہوگئیں اور 100ارب ڈالر سے زائد کا نقصان ملکی معیشت کوپہنچ چکاہے۔ انہوں نے کہاکہ ایک طرف امریکہ پاکستان سے ڈومور کا مطالبہ کررہا ہے اور دوسری طرف افغان انٹیلی جنس اور ’’را‘‘دونوں مل کر پاکستان میں دہشت گردی کا بازار گرم کیے ہوئے ہیں۔مقبوضہ کشمیر میں بھی ہندوستان کی ریاستی ظلم وبربریت جاری ہے۔اب تک ایک لاکھ سے زائد کشمیری بھارتی فوج کے ہاتھوں شہید ہوچکے ہیں۔مقام افسوس یہ ہے کہ عالمی برادری پاکستان میں انڈیا کی مداخلت اور مقبوضہ کشمیر میں ہندوستانی دہشت گردی پر چپ سادھے ہوئے ہے اور اقوام متحدہ اور یورپی ممالک کا کردار اس حوالے سے مایوس کن ہے۔میاں مقصوداحمد نے کہاکہ پاکستان کو امریکہ بھارت گٹھ جوڑ کوناکام بنانے کے لیے چین،ترکی، سعودی عرب،ایران اور دیگر اسلامی ممالک کے ساتھ مل کر مشترکہ لائحہ عمل بناناچاہئے۔ہمیں اب امریکہ پر اپنا انحصار ختم کرکے اپنے پاؤں پر کھڑا ہونا ہوگا اور اس کے لیے ضروری ہے کہ داخلہ وخارجہ پالیسیوں کو از سرنومرتب کیاجائے۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس