Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

ابہام ختم کرنے کیلئے 7بی اور7سی کو ”انتخابات ایکٹ 2017ء“ کا باقاعدہ حصہ نہیں بنایا گیا۔محمدحسین محنتی


کراچی 07 نومبر 2017 جماعت اسلامی سندھ کے نائب امیر وسابق ایم این اے محمد حسین محنتی نے کہا ہے کہ حکومت عقیدہ ختم نبوت سے لیکر سودی نظام معیشت اور مہنگائی تک عوام کو گمراہ کررہی ہے، قوم اچھی طرح جانتی ہے کہ کون ان کے ساتھ جھوٹ بول رہا ہے،پانامہ لیکس کی طرح الیکشن ایکٹ 2017کی آڑ میں حلف نامہ عقیدہ ختم نبوت میں حکومت کی قادیانی نواز چوری پکڑلی گئی ہے، عوامی احتجاج کے بعد ابھی تک حکمرانوں نے آدھا سچ بولا ہے، اہلیان پاکستان تحفظ ناموس رسالت اور عقیدہ ختم نبوت کے قانون کو کمزور کرنے کیلئے غیروں کے غلام حکمرانوں کی کوئی بھی سازش کامیاب ہونے نہیںدیں گے۔انہوں نے آج ایک بیان میں مزید کہا کہ تحفظ ناموس رسالت اور عقیدہ ختم نبوت ہر مسلمان کے ایمان کا حصہ ہے، حکمرانوں نے اپنا رویہ درست نہ کیا تو پھر دنیا میں احتساب کے ساتھ ساتھ اللہ تعالیٰ کی عدالت میں عبرت ناک انجام سے بھی بچ نہیں سکتے۔اقتدار وذاتی مفادات کی تکمیل کیلئے امت مسلمہ کے مرکز ومحور تحفظ ناموس رسالت ،قانون عقیدہ ختم نبوت کو نشانہ بنانا عذاب الاہی کو دعوت دینے کے مترادف ہے۔ اس وقت حکومت نے عوامی احتجاج پر حلف نامہ کو تو درست کردیا مگر مسلمان ووٹر لسٹ میں قادیانیت کو روکنے والے پرانے قانون کی دفعات 7Cاور7Bکو نئے الیکشن ایکٹ کا حصہ نہیں بنایا گیا ہے، جس سے ابہام باقی ہے۔ حکومت نے قومی اسمبلی اور سینیٹ دونوں میں وعدہ کیا تھا کہ7-B اور 7-C کو ”انتخابات ایکٹ 2017ئ“ کا حصہ بنایا جائے گا اور اس حوالے سے قومی اسمبلی اور سینٰٹ میں بل منظور کرایا جائے گا، لیکن ابھی تک مذکورہ پیراگراف (7-B اور 7-C)) کو ”انتخابات ایکٹ 2017ئ“ کا باقاعدہ حصہ نہیں بنایا گیا۔اسلئے پوری قوم کا مطالبہ ہے کہ مسلمانوں کی ووٹر لسٹ میں نام لکھوانے کیلئے ختم نبوت کے حلف والی دفعہ 7Bاور قادیانیوں کو غیر مسلم ووٹر لسٹ میں نام لکھوانے کیلئے 7Cالیکشن ایکٹ 2017میںترمیم کرکے نئی دفعات 37Aاور37Bکو فی الفور اس کا حصہ بنایاجائے۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس