Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

اہم خبریں

برما روہنگیا کے مسلمانوں پرظلم و ستم اور نسل کشی کے خلاف ریلوے مزدور سراپا احتجاج


لاہور9ستمبر2017ء:پاکستان ریلوے ایمپلائز پریم یونین سی بی اے کے زیر اہتمام ہیڈکوارٹر میں برما روہنگیا کے مسلمانوں پر بربریت، ظلم و ستم اور نسل کشی کے خلاف ریلوے مزدور سراپا احتجاج بن گئے۔ ریلوے ہےڈ کوارٹر کے سینکڑوں ملازمین نے برانچوں سے نکل کر ریلی کی صورت میں علامہ اقبال روڈ پر آکر دھرنا دے دیا اور اس موقع پر پریم یونین کے مرکزی سینئر نائب صدر شیخ محمد انور، ہےڈ کوارٹر ڈویژن کے صدر صوفی رمضان باوا، ڈپٹی سیکرٹری جنرل فےاض شہزاد، مرکزی جوائنٹ سیکرٹری طارق نےاز، چوہدری ظفر، رشید باجوہ اور رفیق اعوان نے خطاب کیا اور اس موقع پر برمی وزیرِ اعظم کے پتلے کو نظر آتش کیا گیا۔

                شیخ محمد انور نے اقوامِ متحدہ اور عالمی طاقتوں سے مطالبہ کیا کہ دورنگی کو ختم کیا جائے، ایک طرف تو مرغی انڈہ نہ دے تو پورا اقوامِ متحدہ شور مچا دیتا ہے اور دوسری طرف برما مےں مسلمانوں پر جو ظلم و ستم ڈھایا جا رہا ہے دُنیا میں اس کی کہےں کوئی نظیر نہےں ملتی۔ دنیا کے کسی حصے مےں کسی بھی اقلیت کے ساتھ وہ ظلم، جبر اور تشدد نہےں ہورہا جو آج برمی مسلمانوں کے ساتھ ہورہا ہے۔ برما کے مسلمانوں کو برما میں ایک جگہ سے دوسری جانب جانے پر بھی پابندیاں عائد ہےں۔ نہ تو انہےں سرکاری ملازمت مل سکتی ہے، یہاں تک کہ مسلمانوں پر شادی کرنے پر بھی پابندی ہے۔ اس کی اجازت بھی سرکار سے لینی پڑتی ہے۔ خواہش مند جوڑے کو حکومتی اہلکاروں کے سامنے پیش ہونا پڑتا ہے اور ہزاروں مثالیں موجود ہےں کہ شادی کی خواہش میں لڑکی ان درندہ صفت سرکاری اہلکاروں کے ہاتھوں اپنی عزت گنوا بےٹھی۔ اس کے علاوہ بھی ملک میں کئی بار مسلم کش فسادات ہوئے لیکن بین الاقوامی برادری نے کبھی کوئی نوٹس نہےں لیا۔

شیخ انور نے اسلامی ملکوں کے سربراہ سعودی عرب سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ فوری طور پرمسلم ممالک کے سربراہان کو اکٹھا کریں اور سب سے پہلے ترکی کے صدر طیب اُردگان کی طرح تمام اسلامی ملکوں سے فی الفور برمی سفیر کو نکالا جائے اور مالدیپ کی طرح برما کے ساتھ تمام تجارتی رابطے ختم کردینے چاہییں۔ اُنہوں نے وفاقی حکومت پر تنقید کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ برمی سفیر کو ملک بدر کیا جائے۔ سفارت خانے کو بند کیا جائے۔ اُنہوں نے وزیر اعظم اسلامی جمہوریہ پاکستان شاہد خاقان عباسی سے مطالبہ کیا کہ وہ ترک صدر طیب اُردگان کو ہم آواز ہوکر بنگلہ دیش کی حکومت پر مسلمانوں کےلئے سرحد کھولنے پر دباﺅ ڈالیں، برمی مسلمانوں سے اظہار یکجہتی اور اُن پر ہونے والے مظالم کے خلاف سرکاری طور پر کمپین چلائی جائے۔مزید اُنہوں نے مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ طیب اُردگان کی طرح برمی حکومت کو دھمکی دی جائے اور اگر وہ نہ سمجھیں تو پھر محمد بن قاسم کی طرح برما کو منہ توڑ جواب دیا جائے۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس