Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

حکمرانوں نے قوم کے بچے بچے کو غیر ملکی قرضوں میں جکڑ دیا ہے۔لیاقت بلوچ


 لاہور 19مارچ 2017 ء: قائم مقام امیرجماعت اسلامی پاکستان اور ملی یک جہتی کونسل کے جنرل سیکرٹری لیاقت بلوچ ، متحدہ جمعیت اہل حدیث پاکستان کے مرکزی امیر علامہ سید ضیاءاللہ شاہ بخاری ، ملی یکجہتی کونسل کے مرکزی نائب صدر علامہ محمدامین شہیدی، ڈپٹی سیکرٹری جنرل علامہ ثاقب اکبر، تحریک جوانان پاکستان کے مرکزی صدر محمد عبد اللہ حمید گل اور دیگر مقررین نے جناح پبلک ہال حافظ آباد میں متحدہ جمعیت اہل حدیث اور ملی یکجہتی کونسل کے زیر اہتمام اتحاد اُمت کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ حکمرانوں نے قوم کے بچے بچے کو غیر ملکی قرضوں میں جکڑ دیا ہے جس کی مالیت 65ارب ڈالر سے زائد ہو چکی ہے، ہم پوچھتے ہیں کہ قرضوں کی یہ رقم کہاں گئی۔ کرپٹ مافیا گذشتہ70سالوں سے قومی وسائل پر شبخون مار کر سرمایہ بیرونی بینکوں میں منتقل کررہا ہے جس کی مالیت 400ارب ڈالر ہے۔ اگر وہ تمام سرمایہ پاکستان آجائے تو نہ صرف قرضہ اُتر سکتا ہے بلکہ ڈیم، سڑکیں، سکول، ہسپتال اور شہریوں کیلئے گھر بن سکتے ہیں۔ حکمران اگر قرضے لے کر عوام کو پینے کا صاف پانی ،صحت وتعلیم اور دیگر بنیادی سہولتیںہی فراہم کردیتے تو آج ملک کی یہ حالت نہ ہوتی۔ جماعت اسلامی غریب لوگوں کو علاج کی مفت سہولتوں کی فراہمی کے ساتھ ساتھ کرپٹ حکمرانوں سے نجات اور ملک میں دیانتدارواہل قیادت لانے کیلئے بھی کوشاں ہے۔اُنہوں نے کہا کہ کرپٹ حکمرانوں کی وجہ سے تمام سرکاری ادارے اور دفاتر کرپشن کا گڑھ بن چکے ہیں جس کی وجہ سے تمام ادارے تباہ اور برباد ہو چکے ہیں۔ جماعت اسلامی ملک میں عدل وانصاف پر مبنی معاشرہ قائم کرکے بیرونی قرضوں کی لعنت سے چھٹکارا حاصل کرے گی اور لٹیروں سے بیرونی ممالک میں رکھی گئی دولت واپس لا کر ملکی وقومی ترقی کیلئے خرچ کرے گی۔ قانون کی حکمرانی قائم کرکے منصفانہ نظام قائم کیا جائے گا۔ تھانہ وکچہری اور سرکاری دفاتر کے کلچر کو مکمل طور پر تبدیل کر کے عوامی امنگوں سے ہم آہنگ کیا جائے گا۔ عوام جماعت اسلامی کا ساتھ دیں اور کرپٹ حکمرانوں سے نجات اور اپنے حقوق حاصل کریں۔ انہوں نے کہا کہ پانامہ کیس حکمرانوں کے گلے کی ہڈی بن چکا ہے ،ہم عدالتی فیصلہ قبول کریں گے تاہم پانامہ زدہ حکمران عوام کے غیظ وغضب سے نہیں بچ سکیں گے۔اُنہوں نے کہا کہ اسلام اور اسکے ماننے والوں کا اتحاد باطل قووتوں کے لئے موت کا پیغام ہے ۔مسلمانوں کا باہمی رشتہ دین کا ہے اور ےہ ہم سب کی ذمہ داری ہے کہ ہم اللہ تعالیٰ کی دین اور نظام مصطفی کی سر بلندی کے لئے اپنا مذہبی فریضہ اداد کرتے ہوئے اسلام دشمن قووتوں کا ڈٹ کر مقابلہ کرےں۔اسلام قےامت تک سلامت رہیگا اور اسکے ماننے والوں کا کبھی نہےں مٹاےا جا سکے گا۔ان خیالات کا ظہار انہوں نے متحدہ جمعےت اہلحدیث کے زیر اہتمام ہونے والی اتحاد امت کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔اُنہوں نے کہا کہ آج ہمارے نظرےہ،تعلیم،تہذیب،مساجد اور مدارس کو خطرات لاحق ہےں ہماری نئی نسل سے مسلم تہذیب،اسلامی و اخلاقی قدریں چھینی جا رہی ہےں ،اسلامی نظریہ کی حفاظت آج ہمارے لئے سب سے بڑا چیلنج بن چکا ہے ۔ ہمیں سائنس اور جدید ٹیکنالوجی سے کوئی اختلاف نہےں لیکن ذرائع ابلاغ اور آزادی اظہار رائے کے نام پر کسی توہین رسالت ﷺ اور توہین صحابہ کی ہرگز اجازت نہےں دی جاسکتی ۔حضور نبی کریم ﷺ کی ناموس اور حرمت کا احترام سب مسلمانوں کا فرض ہے ، ایک سوچی سمجھی سازش کے تحت مسلمانوں کو مغربی تہذیب میں دھکیلا جا رہا ہے۔مقرین نے کہا کہ اسلام کے ماننے والوں کا اتحاد قر آن و سنت کی تعلیمات کی بنیاد پر قائم ہونا وقت کی اہم ضرورت ہے اور اس کے لیے سب کو اپنا اپنا دینی، مذہبی فریضہ ادا کرنا ہو گا۔ اُنہوں نے کہا کہ افغانی ہمارے بھائی ہیں اور ان سے ہمارا دینی رشتہ ہے ۔بزرگ رہنما جمعیت اہل حدیث مولانا نصر اللہ خاں بھٹی،مولانا عطاءاللہ محمدی،صاحبزادہ سیداُسامہ ضیاءبخاری ،مرکزی رابطہ سیکرٹری متحدہ جمعےت اہلحدیث عامر وسیم سندھو، حافظ محمد یونس السدیس، فدا الرحمن طیب سمےت دےگر نے بھی کانفرنس سے خطاب کیا۔قبل ازیں جماعت اسلامی کے سیکرٹری جنرل لیاقت بلوچ نے نواحی گاﺅں کو لو تارڑ میں الخدمت فاﺅنڈیشن کے زیر اہتمام منعقدہ فری میڈیکل کیمپ کا افتتاح کیا۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس