Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

مردم شماری کے عمل میں خامیاں بھیانک قومی جرم ہو گا ۔حافظ نعیم الرحمن


 کراچی ؍16مارچ2017ء: امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن نے شہر کے مختلف علاقوں سے مردم شماری کے عمل میں کوتاہیوں سے متعلق اطلاعات پر شدید رد عمل کا اظہار کیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ملک میں وسائل کی تقسیم اور اسمبلیوں میں نشستوں کا تعین جیسے اہم معاملات کا انحصار مردم شماری کے اوپر ہے ۔اس عمل کو ابتدا ہی سے ایک تو بعض سیاستدانوں کے بیانات نے مشکوک بنادیا ہے تو دوسری جانب بے قاعدگیوں سے متعلق اطلاعات ان شبہات کو تقویت دے رہی ہیں ۔انہوں نے کہا کہ پنسل سے فارم بھر نا اور نمبر صحیح نہ لگانا ایک سنگین کوتاہی ہے اور اس حرکت کو محض ناواقفیت یا تربیت میں کمی کہہ کر نظر انداز نہیں کیا جاسکتا جبکہ یہی ساری حرکات کراچی میں انتخابی فہرستوں کی تیاری کے دوران بھی کی گئی تھیں اور بعد میں ان کی بنیاد پر انتہائی ناقص اور غلط اندراجات سے بھر پور فہرستیں جان بوجھ کر تیار کی گئیں تھیں جس کے نتیجے میں کراچی کے انتخابی نتائج ہی کچھ سے کچھ ہو گئے ۔انہوں نے کہا کہ کراچی کے اداروں سے مردم شماری کے کام کے لیے مستعار لیے گئے عملے پر سخت نگاہ رکھنے کی ضرورت ہے کیونکہ ان اداروں میں ہزاروں کی تعداد میں سیاسی کارکنوں کو بھرتی کیا گیا ہے جس کا کام ہی اپنی سیاسی جماعت کے حق میں ہر طرح کی دھاندلی کر نا رہ گیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہم نے فی الحال بیان کے ذریعے اپنے تحفظات کا ظہار کردیا ہے اگر ان کو تاہیوں پر قابو نہ پایا گیا تو ہم عملی اقدامات کا اعلان کریں گے ۔انہوں نے سندھ کی دو مقتدر جماعتوں کی جانب سے مردم شماری کے عمل پر اعتراضات کو نورا کشی قرار دیا کیونکہ ان تمام معاملات میں یہ دونوں جماعتیں ہی دھاندلی کر نے اور کرانے کی ذمہ دار ہیں ان کی جانب سے واویلا صرف عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکنے اور تعصب کی بنیاد پر لوگوں کو بے وقوف بنانے کے لیے ہے اور اس سے ہی مقصد سے یہ ایک دوسرے کے خلاف بیان بازی کر رہی ہیں

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس