Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

قبائلی علاقے


          قبائلی علاقہ کی خصوصی اہمیت کا احترام کیا جائے گا۔

٭       قبائلی علاقہ سے فوج کے انخلاءاور فوجی آپریشن کے خاتمے یقینی بنائیں گے اور مذاکرات کے عمل کو مستحکم اور معتبر کرکے امن قائم کیا جائے گا۔جو لوگ آپریشن کی وجہ سے گھر بار چھوڑ چکے ہیں انہیں جلد از جلد واپس اپنے گھروں میں آباد کرانے کے لیے ہر قسم کا تعاون کیا جائے گا نیز آپریشن کے دوران جن جن لوگوں کا جانی یا مالی نقصان ہوا ہے اس کی تلافی کی جائے گی۔

٭       تعلیم ، صحت اور مواصلات کے نظام کو بہتر بنانے کے انتظامات کئے جائیں گے۔

٭       قبائل کو قیام پاکستان کے بعد آئینی اور قانونی لحاظ سے مسلسل 63سال سے محروم رکھا جارہاہے۔ ان محرومیوں کے ازالہ کے لیے وسیع پیمانے پر کثیر الجہت آئینی اور قانونی، معاشی اور تعلیمی اصلاحات کی جائیںگی۔

٭       آئین پاکستان کی دفعہ 247میں ترمیم کے ذریعے پارلیمنٹ اور عدالتوں کا دائرہ اختیار فاٹا تک بڑھایا جائے گا۔

٭       قانون وضع کرنے اور قانون میں ترمیم کا اختیار صدر مملکت کے بجائے پارلیمنٹ اور قبائل کی منتخب اسمبلی کو تفویض کیا جائے گا۔

٭       ایف سی آر کا مکمل خاتمہ کیا جائے گا۔ نیزایف سی آر کامتبادل قانون وضع کرنے کا اختیار قبائل کی منتخب اسمبلی کو دیا جائے گا۔

٭       نئے قوانین کی ضروریات کے مطابق مذکورہ اسمبلی کوقبائل کی حیثیت اداروں کی ساخت ،کردار اور حقوق و فرائض کے تعین کا اختیار ہوگا۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں







سوشل میڈیا لنکس