Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

5فروری۔۔۔۔۔یوم یکجہتی کشمیر

  1. پاکستانی عوام نے 5 فروری 1990 ءکو ملک گیر پہیہ جام ہڑتال کر کے اور واہگہ سے مظفر آباد پل تک انسانی ہاتھوں کی زنجیر بنا کر کشمیری عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی کا جو بے مثال مظاہرہ کیاتھا آج تک یہ دن ہر سال شان و شوکت کے ساتھ منایا جاتاہے۔پاکستان نے کشمیر کی اس جدوجہد آزادی کی ہمیشہ بھر پور حمایت کی اور سیاسی ، اخلاقی اور سفارتی سطح پر ان کی بھر پور مدد کی
    کشمیر کا مسئلہ مغربی استعمار نے اپنے ظالمانہ فیصلوں اور مسلم دشمن پالیسیوں کی وجہ سے آج سے 70سال قبل پیدا کیا تھا ۔ یہ مسئلہ ہنوز حل طلب ہے ۔ کشمیر کی ملت اسلامیہ نے ایک دن کے لےے بھی کشمیر جنت نظیر پر بھارت کی بالادستی کو قبول نہیں کیا۔ہر سال پاکستان کا یوم آزادی (14 اگست) کشمیری پاکستان کا پرچم لہراتے ہیں ۔” کشمیر بنے گا پاکستان“ کے نعرے لگاتے ہیں اور اس جرم کی پاداش میں بھارتی فوج کا ظلم سہتے ہیں۔ ہر سال بھارت کا یوم آزادی 15) اگست( کشمیری یوم سیاہ کے طور پر مناتے ہیں ۔ اسی طرح ہر سال 26 جنوری ،جو بھارت کا یوم جمہوریہ ہے اس کو بھی یوم احتجاج کے طور پر مناتے ہیں۔ پاکستان اخلاقی و سیاسی ہر لحاظ سے مظلوم کشمیریوں کی حمایت کا پابند ہے اور بھارت کے ساتھ اصل مسئلہ ( کورایشو) کشمیر کا تنازعہ ہی ہے ۔
    جس اصول سے بھی دیکھا جائے ، کشمیر بھارت سے وابستہ نہیں ہو سکتا ۔ 3 جون 1947 ءکے تقسیم ہند کے اصول کے مطابق مسلم اکثریتی علاقے پاکستان میں شامل ہوئے تھے لیکن 27 اکتوبر 1947 ءکو قیام پاکستان کے فوراً بعد ہی کشمیر کی واضح مسلم اکثریت کی ریاست میں بھارتی حکومت نے جارحانہ طور پر اپنی فوجیں اتار دیں اور ریاست کے حکمران ڈوگرہ مہاراجہ کوبھارت کے ساتھ الحاق کرنے پر مجبور کیا لیکن کشمیر کی مسلمان اکثریت نے اسے مسترد کر دیا اور دشمن ملک کو اپنے علاقے سے نکالنے کے لیے جدوجہد شروع کر دی ۔ پھر بھارت 1948 ءمیں خود کشمیر کے مسئلہ کو لے کر اقوام متحدہ میں پہنچا اور وہاں اس شرط پر کشمیر میں جنگ بندی منظور کر لی کہ کشمیریوں کو اقوام متحدہ کی قرار دادوں کے مطابق آزادانہ رائے سے اپنے مستقبل کا فیصلہ کرنے کا حق دیا جائے گا ۔ قرار داد کے الفاظ یہ ہیں :” ریاست جموں و کشمیر کے بھارت یا پاکستان سے الحاق کا مسئلہ آزادانہ و غیر جانبدارانہ رائے شماری کے جمہوری طریقے سے طے پائے گا ۔“ (13 اگست 1948 ء)
    بھارت اور پاکستان دونوں نے اس قرار داد کو تسلیم کیا جس کے بعد ریاست میں جنگ بندی عمل میں آئی لیکن 1951 ءمیں بھارتی وزیراعظم جواہر لعل نہرو نے مقبوضہ کشمیر میں نام نہاد قانون ساز اسمبلی قائم کر کے اپنا موقف تبدیل کر لیا ۔ 1955 ءمیں اقوام متحدہ نے بھارت کے اس موقف کو ماننے سے انکار کر دیا اور انتخابات کو رائے شماری کا بدل تسلیم نہیں کیا ۔ اس کے بعد 1962 ءمیں بھارت چین جنگ کے موقع پر بھارتی وزیراعظم نے امریکہ اور برطانیہ کے نمائندوں کے ذریعے پاکستان کے صدر جنرل محمد ایوب خان کو خط بھیجا جس میں انہوں نے صدر پاکستان سے درخواست کی کہ پاکستانی فوج اس موقع پر کوئی مداخلت نہ کرے ۔ جب چین کے ساتھ ہمار ا سرحدی تنازعہ حل ہو جائے گا تو میں ضمانت دیتاہوں کہ بھارت کشمیر کے اندر رائے شماری کرا دے گا لیکن وقت آنے پر بھارت اس وعدے سے پھر منحرف ہو گیا ۔ اس طرح وہ اقوام متحدہ کی اس قرار داد پر عملدرآمد کرنے کے بجائے کھلے بندوں اس کا انکار کرتے ہوئے کشمیر کو اپنا ”اٹوٹ انگ “ اور” داخلی مسئلہ “ قرار دینے لگا ۔
    1972 ءکے شملہ معاہدے کے تحت بھارت کشمیر کے مسئلے کو بات چیت کے ذریعے حل کرنے کا پابند تھا لیکن سابق وزیراعظم راجیو گاندھی نے 1989 ءمیں پاکستان کی سرزمین پر یہ کہہ کر شملہ معاہدہ کی دھجیاں اڑا دیں کہ” مقبوضہ کشمیر میں چار انتخابات ہو چکے ہیں اور کشمیریوں نے اپنا حق رائے دہی استعمال کرلیاہے اس لیے اب وہاں رائے شماری کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ۔“ اس کا جواب پاکستان کی وزیراعظم تو نہ دے سکیں لیکن کشمیری عوام نے نومبر 1989 ءکے انتخابات کا مکمل بائیکاٹ کر کے بھارت پر واضح کر دیا کہ کشمیری عوام اپنے آپ کو بھارت کے ساتھ وابستہ نہیں کر سکتے اور نہ ہی وہ بھارت کی بالادستی کو تسلیم کرنے پر کسی صورت میں تیار ہوں گے ۔ اس کے ساتھ ہی اہل کشمیر نے اپنی آزادی کی تحریک کا باقاعدہ آغاز کر کے یہ واضح کر دیا کہ اگر کمزور مظلوم و محکوم اقوام اپنی آزادی و خود مختاری کے حصول کا عزم کر لیں تو انہیں بڑی سے بڑی مادی طاقت بھی غلام نہیں رکھ سکتی ۔
    بھارتی فوج نے آزادی کی اس تحریک کو کچلنے کیلئے کشمیریوں پر مظالم کے پہاڑ توڑنے شروع کردیئے ،ان کے گھروں ،کھیتوں اور کھلیانوں کو جلانا شروع کردیا ،نوجوانوں کو پکڑ پکڑ کر بدنام زمانہ انوسیٹی گیشن سینٹروں میں تعذیب کا نشانہ بنایا جانے لگا۔اس دوران بھارتی فوج کے مظالم سے تنگ آکر کئی کشمیر ی خاندان ہجرت کرکے آزاد کشمیرپہنچنے لگے ۔بھارتی فوج کے اس ظلم و بربریت کے خلاف اور کشمیریوں کی ہجرت کے بارے میں پاکستانی اور عالمی میڈیا نے کوئی خبر نہیں دی۔جماعت اسلامی نے آزاد کشمیر میں ان لٹے پٹے کشمیری خاندانوں کو آباد کرنا شروع کردیا اور ریلیف کیمپ قائم کئے ،دنیا کی توجہ اس جانب مبذول کروانے کیلئے سابق امیر جماعت اسلامی قاضی حسین احمد ؒ نے 5۔جنوری 1990 کو لاہور کے ایک مقامی ہوٹل میں پریس کانفرنس میں 5فروری 1990 ءکو ملک گیر پہیہ جام ہڑتال کی کال دے دی۔یہ پورے ملک میں کامیاب ہڑتال تھی ۔پنجاب حکومت نے بھی اس ہڑتال کو کامیاب بنانے میں کردار اداکیا ۔مرکز میں بے نظیر کی حکومت تھی ،اگلے سال مرکزی حکومت نے 5۔فروری کو سرکاری طور پر ”یوم یکجہتی کشمیر “منانے اور اس دن ملک بھر میں تعطیل کا اعلان کردیا ۔اس کے بعد ہرسال یہ دن قومی سطح پرپوری شان و شوکت کے ساتھ منایا جانے لگا۔یوم یکجہتی کشمیر کے موقع پر تمام سیاسی ومذہبی جماعتیں اور سماجی تنظیمیں بڑی بڑی ریلیاں اور جلوس نکالتی اور جلسے و سیمینار منعقد کرتی ہیں اور پورے ملک میںکشمیریوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کا بے مثال مظاہرہ کیا جاتا ہے ۔یوم یکجہتی کے حوالے سے ہونے والے پروگرامات میں قومی رہنما شریک ہوتے اور خطاب کرتے ہیں ۔گزشتہ 24سال سے 5۔فروری قومی جوش وجذبے اور روائتی انداز میں منایا جاتا ہے ۔
    جنرل مشرف نے اقوام متحدہ کی قرار دادوں پر مشتمل موقف کو ترک کر کے کشمیر پر تواتر سے لچک دار بیانات دیئے تھے ،موجودہ حکومت بھی اسی ڈگرپر چلتے ہوئے مسلسل پسپائی اختیار کررہی ہے لیکن حکمرانوںکو بھارتی قیادت کے دل جیتنے میں ذرا بھی کامیابی حاصل نہیں ہوئی کہ وہ” اٹوٹ انگ “کی رٹ چھوڑ کر کشمیر کو” متنازعہ“ ماننے پر ہی تیار ہو گیاہو ۔کشمیری مجاہدین کے ہاتھ پاﺅں باندھنے کے بعد بھارتی فوج کشمیرسے اپنی تعداد کم کرنے کے بجائے مقبوضہ کشمیر میں فوجی کاروائیوں میں اضافہ کر چکی ہے بلکہ اس کے ساتھ کابل اور قندھار کے راستے پاکستان کے خلاف سازشیں کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی ۔ پاکستانی حکومت دونوں محاذوں پر بے بس اور مقبوضہ کشمیر میں جاری ظلم و تشدد اور انسانی حقوق کی بدترین پامالی پر کوئی ردعمل ظاہر کرنے سے بھی معذور نظر آتی ہے جس کے باعث کشمیری عوام کا اعتماد متزلزل ہو رہاہے اور کشمیری مجاہدین میں یہ احساس جڑ پکڑ رہاہے کہ پاکستانی حکمران کشمیر میں بھی وہی کچھ کریں گے جو انہوں نے افغانستان میں کیا ہے ۔
    المیہ یہ ہے کہ گزشتہ دو عشروں سے زائد عرصے میں کشمیری مسلمانوں نے قربانیوں اور استقامت کی جو تاریخ رقم کی ہے اس کو پاکستانی حکمرانوں نے یکسر نظر انداز کرتے ہوئے ایسے یکطرفہ اقدامات اور اعلانات کیے ہیں جو بھارت کے معاشی اور سیاسی مفادات کا تحفظ کرنے والے ہیں ۔ بھارت کے ساتھ تجارت ، وفود کے تبادلے ، ریل اور بس سروس کا اجرا،بجلی خریدنے کے معاہدے اور سب سے بڑھ کر خون مسلم کے پیاسے ہندو کو پسندیدہ ترین قوم قرار دینا،عملا بھارت کی بالا دستی قبول کرنے کے مترادف ہے ۔ آج کشمیری مجسم سوال ہیں کہ انہوں نے ایک لاکھ جانوں کی قربانیاں کس کے لیے دی تھیں ۔ آج بھی ان کے ہزاروں نوجوان بھارت کے تفتیشی مراکز میں ہیں ۔custodial killing کا سلسلہ جاری ہے۔ ہزاروں اپاہج اور لاپتہ ہیں ۔ ہزاروں ماﺅں بہنوں کی عزتیں بھارتی فوجی درندوں کے ہاتھوںپامال ہوئیں ۔ ان کے گھر بار اور کھیت کھلیان جلائے گئے ۔ کشمیریوں کو اس کے بدلے میں کیا حاصل ہوا ۔ پاکستانی حکمرانوں کی شکست خوردگی بلکہ غداری کی وجہ سے ان کی منزل پہلے سے بھی کہیں دور چلی گئی ہے ۔ کیا انہیں بھارتی درندوں کے رحم و کرم پر نہیں چھوڑ دیا گیا ۔ کیا وہ ان حالات میں اپنی تحریک جاری رکھ سکیں گے اور مزید قربانیاں کس امید پر دیں گے ؟
    حال ہی میں پیش کئے گئے ” سیلف گورنس “اور ” ریاست ہائے متحدہ کشمیر “ کے فارمولوں کو ” کنٹرول لائن “ کو مستقل سرحد بنانے اور دونوں حصوں میں ” اندرونی خود مختاری “ پر اکتفاکرلینے کی سازش اور ”Selfdetermination“کا مطالبہ ترک کرکے ”Self Rule“کی بات کرنا حکمرانوں کی شکست خوردہ ذہنیت کا ثبوت فراہم کرتی ہے ۔جس سے فائدہ اٹھا کر بھارت نے کنٹرول لائن پر ”دیوار برہمن “کی تعمیر شروع کردی ہے۔
    ”سیلف گورنس “ جیسے فارمولے پر خفیہ بات چیت اور ”پیش رفت“ پارلیمنٹ اور عوام کو نظر انداز کرکے کی گئی ہے۔اس ”فارمولے“کو پاکستانی عوام کی تائید حاصل نہیں ہے نہ کشمیری عوام اسے تسلیم کریں گے ۔ ”فوجوں کے انخلائ“کی تجویز بھی اسی صورت میں قابل قبول ہو سکتی ہے جب یہ اقوام متحدہ کی قرار دادوں کی روح کے مطابق اور ان پر عمل درآمد کے حوالے سے ہو اور پوری ریاست سے فوجوں کے انخلاءکے
    بعد کشمیری عوام کو اقوام متحدہ کی قرا ر دادوں کے مطابق اور نگرانی میں اپنے مستقبل کے تعین لئے آزادانہ رائے دہی کا حق استعمال کرنے کا موقع دیا جائے اور وہ اپنی آزاد مرضی سے یہ طے کریں کہ بھارت کے ساتھ رہنا چاہتے ہیں یا پاکستان کے ساتھ شامل ہونا چاہتے ہیں۔ قائد اعظم ؒ کا یہ فرمان کہ ” کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے “ ایک طرف کشمیر کی اہمیت کو اجاگر کرتاہے اور دوسری طرف پاکستان کی بقا و سلامتی کو پنجہ ہنودسے آزاد کرانے کے لیے مسلسل جدوجہد اور پیہم کوشش کی دعوت دیتاہے۔

     

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس