Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

شہیدِ کربلا اور خاتونِ کربلا

  1. تاریخ میں جب بھی شہید کربلا کا تذکرہ آتاہے تو ان کی بہن زینب بنت علی رضی اللہ عنہا کے حالات و واقعات بھی سامنے آ جاتے ہیں۔ زینب بنتِ علی رضی اللہ عنہا آنحضورؐکی نواسی، شیرِ خدا علی المرتضیٰؓاور خاتون جنت فاطمۃ الزہراؓکی نورِ نظر اور شہیدِ کربلا حسین بن علی رضی اللہ عنہا کی بہادر اور جرأت مند بہن تھیں۔ یہی نہیں بلکہ وہ عون اور محمد کی والدہ بھی ہیں جو اپنے عظیم ماموں حسین بن علی رضی اللہ عنہما کے ساتھ میدان کربلا میں خلعتِ شہادت سے سرفراز ہوئے۔ حضرت زینب کی ولادت ۴ ھ میں ہوئی۔ آنحضورؐکی رحلت کے وقت ان کی عمر ۶ سال سے کچھ زائد تھی۔
    حضرت زینبؓکی ولادت کے وقت آنحضورؐجہاد کے لیے مدینہ سے باہر تشریف لے گئے تھے۔ جب مدینہ منورہ پہنچے تو آپؐنے اپنی نومولود نواسی کو گود میں اٹھالیا۔ لعاب مبارک اس کے منہ میں ڈالا اور کھجور چبا کر کھلائی۔ پھر فرمایا یہ مجھے بہت پیاری لگ رہی ہے۔ یہ اپنی نانی خدیجہؓسے بہت مشابہت رکھتی ہے۔ آپؐنے اپنی بڑی بیٹی کے نام پر اپنی اس نواسی کا نام بھی زینب رکھا۔ ۶سال کی عمر میں حضرت زینبؓ نے اپنے والدین کے علاوہ اپنے نانا جانؐسے اس قدر تربیت حاصل کرلی تھی کہ اپنی بے مثال ذہانت و فطانت کی وجہ سے وہ اسلام کے بنیادی عقائد و ایمانیات پر بہت اچھی گفتگو کر لیتی تھیں اور اپنی گفتگو میں برموقع اشعار بھی پڑھتی تھیں۔ انھیں آنحضورؐکے ساتھ پانچ سال کی عمر میں حج کرنے کی سعادت بھی ملی۔ ان کی والدہ حضرت فاطمہؓ بھی آنحضورؐکی رحلت کے چھ ماہ بعد انتقال فرما گئیں۔یوں حضرت زینبؓبہت چھوٹی تھیںجب ماں کی مامتا سے محروم ہو گئیں۔ حضرت علیؓ نے اپنی بیٹی کی بہت اچھی تربیت کی۔ ان کی شادی آپ نے اپنے بھتیجے حضرت عبد اللہ بن جعفر بن ابی طالب سے کردی۔ انھی سے ان کے بیٹے عون اور محمد پیدا ہوئے۔
    حضرت علیؓکی شہادت کے موقع پر حضرت زینبؓبہت غم زدہ ہوئیں اور انھوں نے اپنے محبوب والد کا مرثیہ بھی کہا۔ حضرت زینبؓ کی زندگی اول و آخر عظمتوں کی داستان ہے مگر میدانِ کربلا اور اس کے بعد کی منزلوں میںان کا جو کردار سامنے آتاہے اس کی بہت کم مثالیں انسانی تاریخ میں ملتی ہیں۔ ایک بار وہ میدانِ کربلا میں ۹؍محرم کو صورتحال دیکھ کر قدرے پریشان ہوئیں اور ان کی زبان پر دردناک اشعار آئے۔ حضرت زینبؓ کے اشعار کا مفہوم یوں تھا ’’اے کاش میں یہ منظر دیکھنے کے لیے زندہ نہ رہتی، جب میرا بھائی اور پورا خاندان ظالموں کے نرغے میںآ گئے ہیں۔ ناناابوؐ، والدہ محترمہؓ، بابا جانؓاور برادرِ بزرگ حسنؓسب کی جدائی پر دل پھٹ گیاتھا مگر ان سب کے بعد جس سے آنکھیں ٹھنڈی ہوتی تھیں اور جو میرے دل کا قرار تھا، اب وہ بھی مجھ سے چھن جائے گا۔ اے کاش میں اس کے بدلے میں اپنی جان قربان کر دیتی اور اسے گزند نہ پہنچتا‘‘۔ان جذبات میں کوئی تصنع ہے نہ کسی قسم کی غیر فطری بات۔ یہ فطرتِ انسانی کے عین مطابق ہیں اور ان میں کوئی مبالغہ بھی نہیں۔
    اس موقع پر حضرت امام حسینؓ نے عزیمت کا پہاڑ بن کر اپنی بہن کو نہایت بلیغ انداز اور پر عزم الفاظ میں صبر کی تلقین فرمائی۔ انھوںنے فرمایا: ’’ اے میری بہن ! صبر کو اپنی ڈھال بنائو۔ اللہ سے لو لگائو۔ اللہ کے ذکرسے تسکین حاصل ہوتی ہے۔ اللہ کو بقا ہے باقی ساری کائنات کا مقدر فنا ہے۔ ساری کائنات سے اعلیٰ و ارفع اور مقدس ہستی ہمارے نانا جانؐ کی تھی ( وہ بھی دنیا میںہمیشہ نہیں رہے ) ہمیں انھی کے اسوہ حسنہ کی پیروی کرناہے۔ اے میری پیاری بہن !میری بات سنو۔ میں تمھیں خدا کا واسطہ دیتاہوں کہ میں راہِ حق میں شہادت پا جائو ں تو گریبان نہ پھاڑنا، نہ بین کرنا ، نہ چہرے اور بالوں کو نوچنا۔‘‘ میدانِ کربلا کا معرکہ گرم ہوا تو سب سے پہلے حضرت زینبؓکے نو عمر بیٹے عون و محمد بن عبداللہؓیزیدی فوجوں کے مقابلے پر نکلے۔ وہ بڑی بہادری سے لڑے اور جامِ شہادت نوش کیا۔ ان کے دادا جعفرؓاور والد عبداللہؓبھی شیر دل تھے اور وہ خود تو شیر خدا کے نواسے تھے۔ پورے قافلے میں سے صرف نوعمر زین العابدینؓ،جو شدید بیمار تھا بچ پایا۔ کچھ بدبختوں نے زین العابدین پر ہتھیار اٹھانا چاہے مگر حضرت زینبؓ ان کے سامنے کھڑی ہو گئیں اور فرمایا: خدا کی قسم جب تک میں زندہ ہوں میرے بیمار بھتیجے کو کوئی قتل نہیں کر سکتا۔ حضرت زینبؓ نے غم و الم کے اس موقع پر اپنے نانا محبوب ِ خدا صلی اللہ علیہ وسلم کی روح کو خطاب کیا اور میدانِ جنگ کا درد ناک نقشہ کھینچا، جہاں اہلِ بیت کے لاشے بکھرے پڑے تھے اور جہاں آپؐکے محبوب نواسےؓکابے سرجسم پڑا تھا ۔بس پھر کیا تھادشمن اپنی دشمنی کے باوجود بے ساختہ رونے لگے۔
    قافلۂ اہلِ بیت کو یزید کے دربار میں لے جانے کے لیے کربلا سے دمشق کی جانب سفر شروع ہوا تو یزیدی فوجوں کے حصار میں اسیرانِ اہلِ بیت کو پہلے کوفے کے ظالم گورنر عبیداللہ بن زیاد کے دربار میں پیش کیا گیا۔ قافلے کا گزر کوفے کے بازاروں میں سے ہوا تو بے وفاکوفی ہزاروں کی تعداد میں اس منظر کو دیکھنے کے لیے گھروں سے نکل آئے ۔ اس موقع پر حضرت زینبؓسے کوفیوں کی عہد شکنی اور غداری پر خاموش نہ رہا گیا ۔ انھوں نے ان کو مخاطب کرتے ہوئے فرمایا: ا ے دھوکے بازو! بدعہدی کرنے والو! خدا تمھیں کبھی سکون عطا نہ کرے ۔ تم نے میرے بھائی کے ساتھ جو غداری کی اس نے ثابت کر دیا کہ تمھارے خمیرمیں خیر نہیں۔ تم خوشامدی اور بزدل ہو۔ نواسۂ رسول ؐ کے قتل میں تم بالواسطہ شریک ہو۔ تم نے بیعت کر کے توڑ دی اور حمایت کا اعلان کر کے پیٹھ پھیر گئے۔ یاد رکھو تم خدا کے قہر سے نہ بچ سکو گے۔
    دمشق پہنچنے سے پہلے کوفہ کے گورنر عبیداللہ بن زیاد نے کوفہ میں دربار منعقد کیا اور اسیرانِ کربلا اس کے سامنے پیش کیے گئے۔ بدبخت عبیداللہ بن زیاد نے اس مصیبت زدہ اور غم سے چور خانوادۂ رسولؐکے قافلے کو اذیت پہنچانے کے لیے بہت بے ہودگی اور یاوہ گوئی کا مظاہرہ کیا۔ اس کے یہ الفاظ تاریخ کے صفحات میں خود تاریخ کے لیے اذیت کا باعث ہیں۔ اس نے کہا: خدا کا شکر ہے کہ اس نے تم لوگوں کو رسوا کر دیا اور تمھاری منحرف سوچ کو نیچا دکھا دیا۔ شیر خدا کی بیٹی اس دہشت گردی کے عالم میں بھی بے خوف کلمہ حق بلند کرتے ہوئے بولیں: تعریف اور حمدو شکر ہے اس ہستی کے لیے جس نے اپنے محبوب رسولؐ کے ذریعے ہمیں عزت بخشی۔ ان شاء اللہ فساق رسوا اور ذلیل ہوں گے اور ان کے نظریات لعنت زدہ قرار پائیں گے۔ یہ گفتگو بڑی طویل تھی۔ عبیداللہ بن زیاد جب زچ ہوگیا تو اس نے علی بن حسین ( امام زین العابدین ) کی طرف اشارہ کر کے کہا: اس لڑکے کو کیوں قتل نہیں کیا گیا ؟ اسے میرے سامنے قتل کر دیا جائے۔ حضرت زینبؓاپنے بھتیجے سے لپٹ گئیں اور فرمایا : پہلے مجھے قتل کرو ، پھر اسے قتل کرنا۔
    آخر ابنِ زیاد نے اپنا فیصلہ بد ل لیا اور یہ قافلہ کوفہ سے شام کی طرف سرکاری دستوں کے محاصرے میں روانہ کر دیا گیا۔ کئی دنوںکی مسافت کے بعد یہ مظلوم یزید کے دربار میں پیش کیے گئے۔ نواسۂ رسولؐ کا مبارک سر جسے آنحضورؐپیار سے بوسہ دیا کرتے تھے نیزے کی انی پر پرویا ہوا تھا۔ یزید کے دربار میں ان مظلوموں کو پیش کیا گیا تو اس نے امام کا سر دیکھ کر کہاکہ میں نے اسے نیزے پر پرونے کا حکم نہیں دیا تھا۔ یہاں بھی یزید کے ساتھ جو مکالمہ ہوا،اس میں حضرت زینبؓ نے کمال حکمت و دانش اور جرأت و بہادری کے ساتھ اس کے تمام اعتراضات و خرافات کا بھر پور جواب دیا۔ یزید کے دربار میں حضرت زینبؓ نے ایک موثر اور دردناک خطاب فرمایا۔ اس میں انھوں نے یزید کو باور کرایا کہ اپنے زعم میں وہ سمجھ رہاہے کہ اسے کامیابی مل گئی اور اہلِ بیت سرنِگوں ہو گئے، مگر حقیقت میں اہلِ بیت کا کوئی نقصان نہیںہوا بلکہ یزید اور اس کے پورے ٹولے نے اپنے آپ کو تباہ و برباد کر لیاہے ۔ ؎
    قتلِ حسین اصل میں مرگِ یزید ہے
    اسلام زندہ ہوتاہے ہر کربلا کے بعد
    کچھ دن یزید نے ان لوگوں کو دمشق میں ٹھہرائے رکھا، پھر اس نے حکم دیا کہ ان خواتین کو سواریوں پر سوار کیا جائے اور مدینہ تک بحفاظت پہنچایا جائے۔ یزید نے صحابی رسولؐحضرت نعمان بن بشیرؓانصاری کو جو دمشق میں مقیم تھے، ذمہ داری سونپی کہ وہ اپنی نگرانی میں قافلے کو مدینہ تک پہنچائیں۔ اونٹوں پر محمل رکھے گئے تھے۔ حضرت زینبؓ نے فرمایا کہ محملوں پر سیاہ چادریں ڈال دی جائیں۔ اس لیے کہ محملوں میںحضورؐ کی بیٹیاں سوار تھیں اور سفر لمبا تھا۔ ان کو یہ سفر پردے میں کرنا تھا کہ ان پر کسی کی نظر نہ پڑے۔ یہ خاتونِ جنت کی بیٹیاں تھیں جنھوں نے فرمایا تھا کہ ان کے جنازے کے وقت چشمِ فلک بھی ان کے کفن کو نہ دیکھ سکے۔ واقعاتِ کربلا کی خبر مدینہ منورہ پہنچ چکی تھی۔ جب یہ قافلہ مدینہ کے قریب پہنچا تو مدینہ میں موجود صحابہؓو تابعینؒاور اہلِ مدینہ بڑی تعداد میں ان کے استقبال کے لیے شہر سے باہر نکلے۔ مشہور صحابی حضرت جابر بن عبداللہ انصاریؓسب سے آگے آگے تھے اور ان کی آنکھوں سے آنسو رواں تھے۔ وہ فرما رہے تھے کہ یہ قوم اپنے نبیؐ کو روز قیامت کیا منہ دکھائے گی؟

     

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس