Jamaat-e-Islami Pakistan | English |

جب ان سے پو چھا گیا۔۔۔۔۔۔آپ کو جمعیت سے کتنی محبت ہے؟

  1. جب ان سے پو چھا گیا۔۔۔۔۔۔۔!

    (ظفر جمال بلوچ مرحوم کی وفات سے ایک ہفتہ قبل ان سے ملاقات)

    آپ کو جمعیت سے کتنی محبت ہے؟

     مجھے آج بھی جمعیت جان سے عزیز ہے۔

    ظفر جمال بلوچ                             

     

    آپ کا یہ سوال مجھے رُلا دیتا ہے ، مجھے میری جمعیت بہت عزیز ہے۔ بظاہر سچ تو یہ ہے کہ میرا کوئی بیٹا نہیں۔ مگر میرے بیٹے! مجھے یہ احساس کبھی نہیں ہوا کہ میرا کوئی بیٹا نہیں جمعیت کا ایک ایک کارکن میرا بیٹا ہے ۔ جمعیت کے کارکن کی محبت نے مجھے ہمیشہ توانا رکھا، آج بیماری کی اس کیفیت میں بھی مجھے اٹھ بیٹھنے کا حوصلہ جمعیت کا کارکن ہی دیتا ہے۔

    بیٹا ! مجھے میری جمعیت جان سے زیادہ عزیز ہے۔  اس سے زیادہ محبت کا کوئی پیمانہ نہیں ۔ جمعیت کا کارکن تحریک کے ساتھ بہت مخلص ہے ۔ اللہ آپ لوگوں کو دنیا و آخرت میں کامیاب کرے، آپ میں سے ہر فرد میرا اپنا ہے ، میرا حوصلہ ہے۔ اسلامی جمعیت طلبہ کے کارکن سے نظامت اعلیٰ تک کے ایام کو میں اپنی زندگی کے شاندار ایام میں شمار کرتا ہوں ۔

    تعلیمی اداروں اور رہائشی حلقہ جات سے آپ لوگوں کی آنے والی اچھی خبریں میری زندگی کے دن بڑھا دیتی ہیں۔ جب کسی حلقے سے کوئی ناخوشگوار خبر آتی ہے دل بجھا بجھا سا محسوس کرتا ہے یہاں تک کہ وہاں کے کارکن کی آسانیوں کی خبر نہ آ جائے۔ اور یہ والہانہ محبت کا ایک انداز ہے۔ دین اسلام کو نظام حیات کے طور پر نافز کرنے کی جدجہد میں مصروف میری جمعیت میرا سرمایہ  ہے، میری پہچان ہے، میرا فخر ہے۔  میں تو اس دنیا میں مہان ہوں ، بلکہ ہم سب لیکن دعا ہے کہ یہ جمعیت تا قیامت سلامت رہے اور اپنی جدوجہد میں جلد از جلد کامیاب ہو۔

 
 
 
 
     ^واپس اوپر جائیں









سوشل میڈیا لنکس